Skip to main content

Posts

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar

Shaan e Mustafa

 Shaan e Mustafa محمد زینت رحمت عرش بریں اللعالمیں نبی کی زلف کو واللیل کہتے رُخ پر نور بے حد ہی حسیں ہے نبی تھے آپ قبل از خلق آدم ابد تک بھی وہ ختم المرسلین ہے وہی فرقاں، وہی ہے روحِ قرآں  وہ طہ ہے، وہ یسین مبین ہے مقام مصطفی احمد کا عارف ہے یا خدائے عالمیں على ہے وہی ہے باعث تخلیق عالم سے پردم  یہ زمیں ہے اُسی کے دم اشارے ہوا جس کے قمر شق وہ احمد ہے، شفع المذنبین ہے محمد ہی تو ہے نور مجسم وہی ہے جس کا سایہ ہی نہیں ہے ضیا جس سے ہے لی شمس و قمر نے  وہی نور خدا روشن جبیں ہے خدا نے اُس کو وہ معراج بخشی  بنا وہ زینت عرشِ بریں ہے فرشتے اُس کی دربانی نازاں مصاحب اُس کا جبریل امیں ہے کہاں میں اور کہاں نعت محمد  تمنا ہے، مگر قدرت نہیں ہے Mohammad zeenat rehmat arsh bareen اللعالمیں nabi ki zulff ko واللیل kehte rukh par noor be had hi hsin hai nabi thay aap qabal az Khalq aadam abadd tak bhi woh khatam al-mursaleen hai wohi فرقاں, wohi hai rohِ qraan woh Taah hai, woh yaseen Mubin hai maqam mustafa Ahmed ka arif hai ya khuday-e عالمیں على hai wohi hai baais takhleeq aalam se pur-dum yeh zamee

New Naat Mustafa

 New Naat Mustafa کسی درجہ با وقار ہے ایوان مصطفی  منصب ہے جبرئیل کا دربان مصطفی اللہ کے حبیب کا حاصل اُنہیں مقام  ختم الرسل کا مرتبہ شایان مصطفى مسلم وہی ہیں جن سے ملے امن و آشتی  یہ ہے حدیث پاک به فرمان مصطفی یسین کہہ دیا کہیں طہ بتا دیا  قرآن ہے گواہ به ایقان مصطفى کفار معترف ہیں کہ ہیں صادق و امین  ما ينطق عن الھوی ہے شان مصطفى ان ہی کی ذات شارع شرع مبین ہے  اسلام ہے کتاب به عنوان مصطفى اُس نے نظام عدل عطا کر دیا ہمیں  انسانیت پر کم نہیں احسان مصطفی اعجاز ہر نبی کا خدا نے انہیں دیا  شمس و قمر ہیں تابع فرمان مصطفی ہیں روز حشر ساقی کوثر تو مرتضی  حق کی طرف سے مالک رضوان مصطفى فرماں روائے جن و بشر فرش خاک پر  عرشِ بریں پہ رب کا ہے مہمان مصطفی حسن و جمال میں وہی یکتائے کائنات  نور خدا ہے صورت تابان مصطفی ممکن نہیں کسی سے ثناء اُن کی ہو تمام  ہے رب ذوالجلال ثناء خوان مصطفى منصب کی اقتدار کی حاجت نہیں مجھے  ہے میرے پاس دولت فیضانِ مصطفی ناشاد کی دعا ہے الہی! محشور کر  غلامان مصطفى kisi darja ba Waqar hai ewaan mustafa mansab hai jibrael ka darbaan mustafa Allah ke habib ka haasil unhen m

naat e rasool

 Naat E Rasool  رو میں ہے رخش خامہ نبی کی شنا لکھوں  صادق لکھوں، امین لکھوں، مصطفی لکھوں  قرآن تمام مدح و ثنائے رسول ہے  بہتر یہی ہے اُن کو رسول خدا لکھوں  آدم سے قبل اُن کی جو تخلیق ہو گئی  تخلیق رب کی کیوں نہ انہیں ابتدا لکھوں  دنیا میں آج نور محمد ہوا ظہور  اس نور کو تو نور خدا بر ملا لکھوں  مہماں بنا کے لے گیا قوسین سے پرے  پھر کیوں نہ ضیف صاحب عرش علی لکھوں روشن نبی کے نور ہدایت سے کائنات  جی چاہتا ہے اس لئے شمس الہدی لکھوں تکمیل دین ہو گئی اُن کے ظہور سے لازم ہے اُن کو وارث کل انبیا لکھوں عالم انہیں کے واسطے تخلیق ہو گیا  حق ہے کہ اُن کو باعث ارض و سماء لکھوں ان پر درود بھیجتا ہے رب ذوالجلال  پھر کیوں نہ میں بھی صاحب صل علی لکھوں سارے صفات لکھ دیئے قرآن پاک نے  اب میں لکھوں انہیں تو حبیب خدا لکھوں اُن کا لقب بشیر و نذیر و رشید ہے  ہے آفتاب رشد و ہدایت بجا لکھوں یثرب کی ظلمتوں میں جو پھیلائی روشنی  اُن کا لقب لکھوں تو میں بدر الدجی لکھوں اے آفتاب برج نبوت سلام ہو  سب کچھ خدا نے لکھ دیا میں اور کیا لکھوں ناشاد پر نگاہ کرم! اذن ہو تو میں  اپنے لئے فدائے محمد سدا لکھوں ro mein hai Ra

urdu new hamad

Urdu New Hamad Rehman to Raheem to aur Zuljilal hai rab kareem to hi jamal o kamaal hai mujh ko Sapas o hamd ki tofeq day sada teri ataa nah ho to meri kya majaal hai taseer di zabaan ko, aankhon ko roshni tairay baghair saans bhi lena mahaal hai kon o makaan, kin se hi peda kiye gaye to maalik yakoon, bulaa qail o qaal hai meri khataon aur gunaaho ko bakhash day to Afoo o dar guzar mein bara be misaal hai hamd kkhuda o naat nabi madah اهلبیت likhta rahon hamesha yeh mera kamaal hai rehmat ho mujh pay rehmat aalam ke wastay dono jahan mein jis se mra Itsaal hai hum na samajh hain, qoum ki kashti bhanwar mein hai hum par tri nigah karam hasb haal hai arz watan se khauf ke baadal utha day ab tairay karam se husn talluq bahaal hai Nashad hum mein koi nahi, saaray shaad hain hum sab ka jab waseela محمدؐ ki all hai رحمان تو رحیم تو اور ذوالجلال ہے  رب کریم تو ہی جمال و کمال ہے مجھ کو سپاس و حمد کی توفیق دے سدا تیری عطا نہ ہو تو مری کیا مجال ہے تاثیر دی زبان کو، آنکھوں کو روشنی تیرے بغیر سان

New Hamd Urdu

 New Hamd Urdu mujhe fakhr –apne naseeb par mujhe Faiz hamd sun-hwa ataa mein hon mutarrif, mein haqeer hon, تراحق mein kaisay karoon ada to hamid hai, to Majeed hai, to lateef hai, to rasheed hai tri hamd kaisay bayan ho, to hi is ki terhan mujhe bta tri bargaah mein hon khara, marey charah gir mujhe bheek day to ghanni hai, to hi Muqeet hai, mein tre hi derka hon ik gadda to Hafeez hai, to ghafoor hai, to hakeem hai, to Raheem hai tri rehmaton ka sawal hai, koi aur reham kere ga kya to Sami hai, to Baseer hai, to khaibar hai, to Aleem hai to hi jaan laita hai raaz dil, koi bhaid tujh se nah choup saka jo mareez hai, jo aleel hain, unhen kya gharz hai tabeb se tra naam sab ke liye dawa, tra zikar sab ke liye Shifa meri lagzishon ka hisaab kya, mein Ghareeq behar gunah hon tri nematon ka shumaar to mein kisi terhan se nah kar saka dar mustafa ko bhi choom lon, tre ghar ka phir se tuwaf ho meri khawahishon ko tamam kar, yahi arzoo hai marey kkhuda ! safeer Adam ko jo mein brhhon, marey

Allah ki Hamad

Allah ki Hamad  رب تری حمد ہی عبادت ہے عرض کرتا ہوں گر اجازت ہے حمد رب کے بغیر کوئی سخن نہ کہیں کہیں قابل ہے تو ہی رحمان اور تو ہی رحیم تجھ سے اُمید استقامت ہے مجھ سے کم ذہن و کم سخن کے لیے حمد لکھنا ہی اک سعادت ہے ذکر حق میں مگن ہی رہنے میں واه رے، منفرد حلاوت ہے نور مهتاب و آفتاب فضا و ہاں تری ذات کی شہادت ہے ساری تخلیق آسمان و زمین  تیری قدرت کی اک دلالت ہے گردش کائنات جاری ہے جس پر ہر دم تری نظارت ہے مجھ سیہ کار پر بھی فضل و کرم  تیری ہی ذات کی عنایت ہے دل ہو منکر زباں بہ ذکر تیرا  عبادت نہیں جسارت ہے گر ہے قائم صداقت پر تو دعا قابل اجابت ہے مجھ ناشاد و ناتواں کے لیے حمد گوئی ہی قد و قامت ہے rab tri hamd hi ibadat hai arz karta hon gir ijazat hai hamd rab ke baghair koi sukhan nah kahin kahin qabil hai to hi Rehman aur to hi Raheem tujh se umeed istiqamat hai mujh se kam zehen o kam sukhan ke liye hamd likhna hi ik Saadat hai zikar haq mein magan hi rehne mein ﻭﺍﻩ ray, munfarid Halawat hai noor مهتاب o aftaab fiza o haan tri zaat ki shahadat hai saari takhleeq aasman o zameen teri

Hamad e Baari Taalaa

 Hamad e Baari Taalaa parvar-digaar! to hai jali aur to jallel to hai Aziz , mein hon tera bandah zaleel neelay gagan ko taan liya to ne be sutoon ya rab tairay kamaal ki kaafi hai yeh Daleel gardish mein ik madaar pay mehtaab o aftaab سیارگاں bhi, unn mein nah taizi nah koi dheel hikmat se teri gardish Lail o nehar hai phaily hui Zia , kahin zulmat ki hai Faseel sirsabz wadiyaan, kahin darya, kahin pahar fitrat ke hain krshme, tairay kis qader Jameel matti bichaa di to ne hi behar muheet par phir garh di hain uss par pahoron ki kitni keel teri nishanain hain yeh sehraa, shajar, hijr makhlooq be hisaab teri, khaaliq adeel Razaq hai to har aik, Saghir o kabeer ka teri ataa, har aik ko hai more ho ke feel to ne bacha liya wahan moose" ko neel se teri nazar thi bach gaye yaan aag se khalil khaaliq! tairay wujood se munkir hain kitney log kitney hain is Jahan mein gumraah aur razeel jannat banai to ne hi momin ke wastay jis mein rawan hain kusar o Tasneem o زنجبیل jannat hai woh maqam