Skip to main content

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar

Wiladat Imam Hassan s.a

 Wiladat Imam Hassan s.a

حسن دیار ولایت کا تاجدار ولی
 حسن نظام امامت میں جانشین علی

جمال وحسن میں اُن کا نہیں کوئی ثانی 
کمال علم و عمل میں وہ ہو بہ ہو تھے نبی

دیار صبر و رضا میں وہ اپنی آپ نظیر 
جہاں میں صلح حسن ایک حسیں مثال بنی

جہانِ جود و سخا میں حسن خود اپنی مثال 
نادار کے کفیل وہ یتیم و بیوه 

انہیں کے خوان کرم پر تھے انگنت مہمان 
نہیں تھا کوئی تفاوت غریب ہو کہ غنی

حسن، حسین، جوانان خلد کے سردار 
رسول پاک سے روشن یہی حدیث ملی

حسن نہ ہوتے تو تکمیل پنجتن تھی محال 
مدار پنجتن پاک خود بتول بنی

ہوئی حسن کی ولادت به نیمه رمضان 
فرشتے آ گئے تبریک کو بہ پیش نبی به

مری طرف سے بھی تبریک پیش ہے آقا! 
یہ اب چہارم آل عبا کی عید ہوئی

 دعا ہے میری کہ عالم میں امن ہو قائم 
سکون سب کو، کسی کو نہ چین میں ہو کمی

قبول کیجئے مولا حقیر سے یہ کلام
 یہ منقبت ہے جو ناشاد سے ہے نظم ہوئی

husn deyaar Wilayat ka Tajdar walii
husn nizaam imamat mein janasheen Ali

jamal وحسن mein unn ka nahi koi sani
kamaal ilm o amal mein woh ho bah ho thay nabi

deyaar sabr o Raza mein woh apni aap nazeer
jahan mein sulah husn aik hsin misaal bani

jahan jood o sakha mein husn khud apni misaal
nadaar ke kafeel woh yateem o بیوه

inhen ke khawan karam par thay unginat maheman
nahi tha koi tafawut ghareeb ho ke ghanni

husn, Hussain , جوانان Khuld ke sardar
rasool pak se roshan yahi hadees mili

husn nah hotay to takmeel panjtan thi mahaal
madaar panjtan pak khud batool bani

hui husn ki wiladat b_h نیمه ramadaan
farishtay aa gaye Tabrik ko bah paish nabi b_h

meri taraf se bhi Tabrik paish hai aaqa !
yeh ab chaharum all Aba ki eid hui

dua hai meri ke aalam mein aman ho qaim
sukoon sab ko, kisi ko nah chain mein ho kami

qubool kijiyej maula haqeer se yeh kalaam
yeh Munqabat hai jo Nashad se hai nazam hui

دوسرے برج امامت کا حسن ہے آفتاب 
نیمہ رمضان کو ظاہر ہوا ہے از سحاب

خانہ زہرا میں تو ایک عید کا منظر ہے آج 
آتے ہیں تبریک کو سب پیش آن عزت مآب 

تہنیت کی ہیں صدائیں ہر طرف پھیلی ہوئی 
صف بہ صف فرحاں فرشتے ہو رہے ہیں باریاب

آپ ہیں سبط نبی، دل بندِ زہرا و علی 
کر دیا صلح و صفا کے راستے کو انتخاب

بادی دین نبی با صبر و افکار علی
 آپ کو حق نے بنایا وارث علم الكتاب

وہ غریبوں کا سہارا اور یتیموں کا کفیل 
جن کے دستر خوان پر آتے ہیں سائل بے حساب

آپ کا اعزاز، سردار جوانان بهشت
 جس کو جاتا ہو اُدھر پروانہ لے اُن سے شتاب

از امامت یه حسین ابن علی کے بھی 
امام کسی قدر اللہ نے اُن کو کیا ہے کامیاب

حُسن لکھا ہو کہیں، پڑھتا ہوں میں اُس کو حُسن 
حسن جتنا ہے حسیں وہ ہے حسن سے فیضیاب

آپ نے پائیں صفات مجتبی از مصطفی 
گلشن آل محمد کا ہے یہ کھلتا گلاب

آج بھی اسلام باقی ہے یہ تدبیر حسن 
دے دیا ہے دینِ حق کو آپ نے دائم شباب

آپ نے دی ذوالفقار حیدری شبیر کو
 تا کہ ظلمت سے کریں دینِ الہی بازیاب

حق مدحت تیرا ہو سکتا نہیں مجھ سے ادا 
السلام اے آسمانِ صبر و حق کے ماہتاب

کیجئے ناشاد پر فضل و کرم کی اک نظر 
اے شہنشاہ دو عالم، نور عین بو تراب

dosray burj imamat ka husn hai aftaab
نیمہ ramadaan ko zahir sun-hwa hai az Sahab

khanah Zohra mein to aik eid ka manzar hai aaj
atay hain Tabrik ko sab paish aan izzat maab

Tahiniat ki hain sadayen har taraf phaily hui
saf bah saf Ferhan farishtay ho rahay hain باریاب

aap hain Sibt nabi, dil bndِ Zohra o Ali
kar diya sulah o Safa ke rastay ko intikhab

baadi deen nabi ba sabr o afkaar Ali
aap ko haq ne banaya waris ilm الكتاب

woh ghareebon ka sahara aur yatimon ka kafeel
jin ke dustar khawan par atay hain sayel be hisaab

aap ka aizaz, sardar جوانان بهشت
jis ko jata ho udhar parwana le unn se Shatab

az imamat yeh Hussain Ibn Ali ke bhi
imam kisi qader Allah ne unn ko kya hai kamyaab

husn likha ho kahin, parhta hon mein uss ko husn
husn jitna hai hsin woh hai husn se fizyab

aap ne payen sifaat Mujtaba az mustafa
Gulshan all Mohammad ka hai yeh khilta ghulaab

aaj bhi islam baqi hai yeh tadbeer husn
day diya hai deen haq ko aap ne daaim shabab

aap ne di Zulfiqar haidry Shabir ko
taa ke zulmat se karen deen ellahi Bazyab

haq Midhat tera ho sakta nahi mujh se ada
salam ae Aasman sabr o haq ke Mahtab

kijiyej Nashad par fazl o karam ki ik nazar
ae shenshah do aalam, noor ain bo Terab

Comments

Popular posts from this blog

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023 Iss Post ma ham apky Urdu kay 300 behtreen or nayaab Quotes share karen gay. Ap tamam se guzarish ha ki is post ko apny friends or family kay sath zaroor share karen. Or hamein shukurya ada karny ka moqa den. shukurya...  

Salam Ba Hazoor Imam Hussain

 Salam Ba Hazoor Imam Hussain مہماں بنا کے گھر سے بلایا حسین کو  پھر کربلا کے بن میں بسایا حسین کو یہ قافلہ تھا کوفے کی جانب رواں دواں  کر کربلا میں گھیر کے لایا حسین کو وہ دلبر بتول تھا اور جان مصطفى  کیا جرم تھا یہی کہ بتایا حسین کو عباس اور قاسم واکبر ہوئے شہید  اصغر نے تیر کھا کے رلایا حسین کو رقم سب چل بسے ظہیر و بریر و حبیب تک  کوئی نہیں رہا تھا سہارا حسین کو تنہا نکل رہا ہے حرم سے علی کا لال  گھیرے ہوئے ہے فوج صف آراء حسین کو وہ جنگ کی، کہ بدر کا منظر دکھا دیا  ہر اک نے الامان پکارا حسین کو اتنے میں ماہ دین گہن میں چلا گی  تیغ و تبر سے تیر سے مارا حسین کو نہر فرات پاس تھی پانی نہیں  پیاسا کیا شہید دل آرا حسین کو اے کربلا حسین نے تجھ کو لہو دیا  تو نے نہ ایک قطرہ پلایا حسین کو  زہرا کے کے گلبدن کا بدن بے کفن کو  تپتی زمین پر نہ چھپایا حسین کا جس دل میں عشق سبط نبی کا سما گیا  اس دل نے پھر کبھی نہ بھلایا حسین ن کو ناشاد ناتواں کو زیارت نصیب  یہ التماس بھیجی ہے مولا حسین کو mehmaan bana ke ghar se bulaya Hussain ko phir karbalaa ke ban mein basaayaa Hussain ko yeh qaafla tha kofe k

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar