Skip to main content

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar

Shahadat Imam Ali

 Shahadat Imam Ali

ختم جب عشرہ ثانی رمضاں ہوتا ہے
 لیلتہ القدر کا وہ ماہ عیاں ہوتا ہے

جس کی کعبے میں ولادت ہوئی اُس مولا پر 
مسجد کوفہ میں حملہ بہ نہاں ہوتا ہے

شاه مردان پہ مسجد میں چلی تیغ ستم 
شور محشر به سحر، وقتِ اذاں ہوتا ہے

نورِ حق نفس نبی، مرکز عرفان، علی 
اُن کے چہرے سے لہو آج رواں ہوتا ہے

دی صدا باتف غیبی نے کہ اللہ کے گھر 
نور حق چھپ گیا، ظلمت کا سماں ہوتا ہے

بیت زہرا میں اچانک ہی یہ کہرام مچا
 ہے قیامت کی گھڑی، آہ و فغاں ہوتا ہے

یہ ہے اللہ کا مہینہ، وہ خدا کا گھر ہے 
در گزر چاہئے جس کو بھی یہاں ہوتا ہے

لیل القدر کی شب اور عبادت کی گھڑی 
جس میں ہر ایک نفس راحتِ جاں ہوتا ہے 

مغفرت کا یہ مہینہ ہے تو دیکھو ہر ایک 
شامل رحمت خلاق جہاں ہوتا ہے 

رحمت حق کی اسی ماہ میں گل پاشی ہے 
یہ تو پہنچے گی وہاں تک، تو جہاں ہوتا ہے 

روزه دارد در مالک سے طلب تو کر لو 
مانگنے کا بھی تو انداز بیاں ہوتا ہے 

میرے مالک مجھے رحمت کا سہارا دیدے 
مجھ پہ عصیان کا یہ بار گراں ہوتا ہے 

تیری درگاہ نے بندے کو نہیں دھتکارا 
کہ یہاں سب کے لیے امن و اماں ہوتا ہے

میں ہوں ناشاد خطا کار، مرا رب ہے کریم 
یہ وہ احساس ہے جو ورد زباں ہوتا ہے

khatam jab ashra sani رمضاں hota hai
lilt_h al-qadar ka woh mah ayaan hota hai

jis ki kaabay mein wiladat hui uss maula par
masjid koofa mein hamla bah nihaan hota hai

شاه mardan pay masjid mein chali tegh sitam
shore Mahshar b_h sehar, waqt e azan hota hai

noore haq nafs nabi, markaz Urfan , Ali
unn ke chehray se lahoo aaj rawan hota hai

di sada باتف ghaibi ne ke Allah ke ghar
noor haq choup gaya, zulmat ka samaa hota hai

beeet Zohra mein achanak hi yeh kohram macha
hai qayamat ki ghari, aah o fghan hota hai

yeh hai Allah ka maheena, woh kkhuda ka ghar hai
dar guzar chahiye jis ko bhi yahan hota hai

Lail al-qadar ki shab aur ibadat ki ghari
jis mein har aik nafs Raahat jaan hota hai

mughfirat ka yeh maheena hai to dekho har aik
shaamil rehmat Khalaq jahan hota hai

rehmat haq ki isi mah mein Gul pashi hai
yeh to puhanche gi wahan tak, to jahan hota hai

روزه dard dar maalik se talabb to kar lo
mangnay ka bhi to andaaz bayan hota hai

mere maalik mujhe rehmat ka sahara daiday
mujh pay عصیان ka yeh baar giran hota hai

teri dargaah ne bande ko nahi دھتکارا
ke yahan sab ke liye aman o amma hota hai

mein hon Nashad khata car, mra rab hai kareem
yeh woh ehsas hai jo vird zuba hota hai

ارض و سماء میں شور بپا، مرتضی علی 
جبریل دے رہا ہے صدا، مرتضی علی

جس کو نبی نے تحفہ دیا ذوالفقار کا 
اُس پر چلی ہے تیغ جفا، مرتضی علی

تعریف جس کی شان میں روشن ز انما 
وہ مرد حق شہید ہوا، مرتضی علی

عالم میں اضطراب، فرشتے اُداس ہیں 
چھائی ہے آج غم کی گھٹا، مرتضی علی

معروف تھا جو وجہ خدا کے خطاب سے 
وہ چہرہ آج ہم سے چھپا، مرتضی علی

شیر خدا کا جس کو لقب مل گیا تھا آج 
وہ ہو رہا ہے ہم سے جدا، مرتضیٰ علی

جس کو نبی نے اپنا وصی دے دیا قرار 
ہے آج رو بہ دار بقا مرتضی علی

حسنین رو رہے ہیں فضا سوگوار ہے
اصحاب کی صدائے بکا، مرتضیٰ علی

قنبر کی ہے پکار یہ دلدل کو تھام کر 
میں ہو گیا یتیم ہوں، یا مرتضیٰ علی

کوفے کے مرد و زن سبھی سر پیٹتے ہیں آج 
ہیں سب کے لب پہ آہ و بکا، مرتضیٰ علی

یا رب جہاں میں امن کا سورج طلوع ہو
بہر بتول ہے یہ دُعا، مرتضیٰ علی

ناشاد کیوں نہ ہوں گا میں حیدر کے سوگ میں 
میں ہوں غلام شیر خدا مرتضیٰ علی

arz o Samah mein shore bapaa, Murteza Ali
Jibreel day raha hai sada, Murteza Ali

jis ko nabi ne tohfa diya Zulfiqar ka
uss par chali hai tegh jfaa, Murteza Ali

tareef jis ki shaan mein roshan zay انما
woh mard haq shaheed sun-hwa, Murteza Ali

aalam mein iztiraab, farishtay udas hain
chhai hai aaj gham ki ghata, Murteza Ali

Maroof tha jo wajah kkhuda ke khitaab se
woh chehra aaj hum se chhupa, Murteza Ali

sher kkhuda ka jis ko laqab mil gaya tha aaj
woh ho raha hai hum se judda, murteza Ali

jis ko nabi ne apna wasii day diya qarar
hai aaj ro bah daar baqa Murteza Ali

hasnain ro rahay hain fiza sogwaar hai
ashaab ki sadaye bakka, murteza Ali

Qanber ki hai pukaar yeh duldul ko thaam kar
mein ho gaya yateem hon, ya murteza Ali

kofe ke mard o zan sabhi sir pitte hain aaj
hain sab ke lab pay aah o bakka, murteza Ali

ya rab jahan mein aman ka Sooraj tulu ho
bahar batool hai yeh dُaa, murteza Ali

Nashad kyun nah hon ga mein Haider ke sog mein
mein hon ghulam sher kkhuda murteza Ali

Popular posts from this blog

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023 Iss Post ma ham apky Urdu kay 300 behtreen or nayaab Quotes share karen gay. Ap tamam se guzarish ha ki is post ko apny friends or family kay sath zaroor share karen. Or hamein shukurya ada karny ka moqa den. shukurya...  

Salam Ba Hazoor Imam Hussain

 Salam Ba Hazoor Imam Hussain مہماں بنا کے گھر سے بلایا حسین کو  پھر کربلا کے بن میں بسایا حسین کو یہ قافلہ تھا کوفے کی جانب رواں دواں  کر کربلا میں گھیر کے لایا حسین کو وہ دلبر بتول تھا اور جان مصطفى  کیا جرم تھا یہی کہ بتایا حسین کو عباس اور قاسم واکبر ہوئے شہید  اصغر نے تیر کھا کے رلایا حسین کو رقم سب چل بسے ظہیر و بریر و حبیب تک  کوئی نہیں رہا تھا سہارا حسین کو تنہا نکل رہا ہے حرم سے علی کا لال  گھیرے ہوئے ہے فوج صف آراء حسین کو وہ جنگ کی، کہ بدر کا منظر دکھا دیا  ہر اک نے الامان پکارا حسین کو اتنے میں ماہ دین گہن میں چلا گی  تیغ و تبر سے تیر سے مارا حسین کو نہر فرات پاس تھی پانی نہیں  پیاسا کیا شہید دل آرا حسین کو اے کربلا حسین نے تجھ کو لہو دیا  تو نے نہ ایک قطرہ پلایا حسین کو  زہرا کے کے گلبدن کا بدن بے کفن کو  تپتی زمین پر نہ چھپایا حسین کا جس دل میں عشق سبط نبی کا سما گیا  اس دل نے پھر کبھی نہ بھلایا حسین ن کو ناشاد ناتواں کو زیارت نصیب  یہ التماس بھیجی ہے مولا حسین کو mehmaan bana ke ghar se bulaya Hussain ko phir karbalaa ke ban mein basaayaa Hussain ko yeh qaafla tha kofe k

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar