Skip to main content

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar

Shah e Deen

 

شاہ دین کو سلام کرتا عمل صبح و شام کرتا ہوں یہ عاجزی - سلام لکھتے ہوئے ہوں سبط احمد کے نام کرتا اک غلام حسین ہوں میں بھی فخر اس پر مدام کرتا ہوں مجھ کو نسبت ہے عرش والوں سے فرش پر ہی قیام کرتا ہوں ویسے کرنے کے کام تو ہیں بہت سب سے بہتر یہ کام کرتا ہوں شاہ مظلوم کی موقت میں میں قعود و قیام کرتا ہوں

روز کر کے زیارت مولا

خلد کو اپنے نام کرتا ہوں

منعقد مجلس عزاء کر کے

دری شبیر عام کرتا ہوں

زائر شاه کربلا بننا

خود پر میں التزام کرتا ہوں

اپنے آقا کو یاد کرتے ہوئے

صبح کرتا ہوں شام کرتا ہوں

حشر میں اپنی سرخ روئی کا

یوں ہی کچھ انتظام کرتا ہوں

میں ابو الفصل کی وساطت

عرض پیش امام کرتا ہوں مج

کو در پر بلائیے آق مدعا

بس تمام کرتا ہوں

یہ نذیر ادنی سی کاوش ناشاد خیر الانام کرتا ہوں


Shah deen ko salam karta amal subah o shaam karta hon yeh aajzi - salam likhte hue hon Sibt Ahmed ke naam karta ik ghulam Hussain hon mein bhi fakhr is par madaam karta hon mujh ko nisbat hai arsh walon se farsh par hi qiyam karta hon waisay karne ke kaam to hain bohat sab se behtar yeh kaam karta hon Shah mazloom ki moqt mein mein قعود o qiyam karta hon

roz kar ke ziyarat maula

Khuld ko –apne naam karta hon

munaqqid majlis عزاء kar ke

darri Shabir aam karta hon

Zair شاه karbalaa ban-na

khud par mein iltazam karta hon

–apne aaqa ko yaad karte hue

subah karta hon shaam karta hon

hashar mein apni surkh roi ka

yun hi kuch intizam karta hon

mein abbu الفصل ki wasatat

arz paish imam karta hon mj

ko dar par bulayiyae آق mudda

bas tamam karta hon

yeh Nazeer adna si kawish Nashad kher الانام karta hon

دین حق کو در حقیقت دی بقا شبیر نے دین حق تب بچ گیا، جب سر دیا شبیر نے

اے حسین ابن علی، اے فاتح کرب و بلا تیری قربانی نے دی اسلام کو عمر بقا

کربلا کی خاک کو خاک شفا تو نے کیا کربلا کو زینت عرش علی تو نے کیا

تو نے دکھلائی جہاں انسانیت کو راہِ حق دے دیا دنیا کو آزادی سے جینے کا سبق

درس تیرا، ظلم سے سمجھوتہ پا سکتا نہیں سر کٹا سکتا ہے لیکن سر جھکا سکتا نہیں

تو نے رکھ کر اپنی گردن کو تہہ تیغ ستم تا قیامت رکھ دیا ہے سر بلندی کا بھرم

زہر میں تجھ سا مدیر سورما کوئی نہیں تاجدار حریت تیرے سوا کوئی نہیں

بن گیا دشنام دنیا بھر میں اب نام یزید تیری قربانی سے اُس کی ہو گئی مٹی پلید

تیرے اصغر نے تبسم سے رلایا فوج کو تیرے غازی نے گرایا علقمہ کی موج کو دشت غربت میں بہایا آپ نے اپنا لہو اس لئے باقی ہے اب تک نعرہ اللہ ھو عابد بیمار کی غربت پہ ہوں لاکھوں سلام زینب دلگیر کی عصمت پر ہوں لاکھوں سلام

تیرے اکبر کی جوانی اور عظمت کو سلام تیرے قاسم کے لڑکپن اور جرات کو سلا ں کو سلام

ہی خواب ابراہیم کی تعبیر ہے کربلا کربلا ہی ہی آید تطہیر کی تفسیر ہے

دین حق تیرے کرم سے تا ابد آباد ہے تیرے غم میں عالم انسانیت ناشاد ہے


deen haq ko dar haqeeqat di baqa Shabir ne deen haq tab bach gaya, jab sir diya Shabir ne

ae Hussain Ibn Ali , ae faateh karb o bulaa teri qurbani ne di islam ko Umar baqa

karbalaa ki khaak ko khaak Shifa to ne kya karbalaa ko zeenat arsh Ali to ne kya

to ne dikhlai jahan insaaniyat ko raah e haq day diya duniya ko azadi se jeeney ka sabaq

dars tera, zulm se samjhota pa sakta nahi sir kata sakta hai lekin sir jhuka sakta nahi

to ne rakh kar apni gardan ko teh tegh sitam taa qayamat rakh diya hai sir bulandi ka bharam

zeher mein tujh sa mudeer soorma koi nahi Tajdar hurriyaat tairay siwa koi nahi

ban gaya dushnaam duniya bhar mein ab naam Yazid teri qurbani se uss ki ho gayi matti palidh

tairay asghar ne tabassum se rulaya fouj ko

tairay ghazi ne giraya alqmh ki mouj ko dasht gurbat mein bahaya aap ne apna lahoo is liye baqi hai ab tak naara Allah ho abid bemaar ki gurbat pay hon lakhoon salam zainab dilgeer ki asmat par hon lakhoon salam

tairay akbar ki jawani aur Azmat ko salam tairay Qasim ke larakpan aur jurrat ko sulaa n ko salam

hi khawab ibrahim ki tabeer hai karbalaa karbalaa hi hi aayd tatheer ki Tafseer hai

deen haq tairay karam se taa abadd abad hai tairay gham mein aalam insaaniyat Nashad hai

Comments

Popular posts from this blog

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023 Iss Post ma ham apky Urdu kay 300 behtreen or nayaab Quotes share karen gay. Ap tamam se guzarish ha ki is post ko apny friends or family kay sath zaroor share karen. Or hamein shukurya ada karny ka moqa den. shukurya...  

Salam Ba Hazoor Imam Hussain

 Salam Ba Hazoor Imam Hussain مہماں بنا کے گھر سے بلایا حسین کو  پھر کربلا کے بن میں بسایا حسین کو یہ قافلہ تھا کوفے کی جانب رواں دواں  کر کربلا میں گھیر کے لایا حسین کو وہ دلبر بتول تھا اور جان مصطفى  کیا جرم تھا یہی کہ بتایا حسین کو عباس اور قاسم واکبر ہوئے شہید  اصغر نے تیر کھا کے رلایا حسین کو رقم سب چل بسے ظہیر و بریر و حبیب تک  کوئی نہیں رہا تھا سہارا حسین کو تنہا نکل رہا ہے حرم سے علی کا لال  گھیرے ہوئے ہے فوج صف آراء حسین کو وہ جنگ کی، کہ بدر کا منظر دکھا دیا  ہر اک نے الامان پکارا حسین کو اتنے میں ماہ دین گہن میں چلا گی  تیغ و تبر سے تیر سے مارا حسین کو نہر فرات پاس تھی پانی نہیں  پیاسا کیا شہید دل آرا حسین کو اے کربلا حسین نے تجھ کو لہو دیا  تو نے نہ ایک قطرہ پلایا حسین کو  زہرا کے کے گلبدن کا بدن بے کفن کو  تپتی زمین پر نہ چھپایا حسین کا جس دل میں عشق سبط نبی کا سما گیا  اس دل نے پھر کبھی نہ بھلایا حسین ن کو ناشاد ناتواں کو زیارت نصیب  یہ التماس بھیجی ہے مولا حسین کو mehmaan bana ke ghar se bulaya Hussain ko phir karbalaa ke ban mein basaayaa Hussain ko yeh qaafla tha kofe k

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar