Skip to main content

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar

Salam Ba Hazoor Imam Hussain

 Salam Ba Hazoor Imam Hussain

مہماں بنا کے گھر سے بلایا حسین کو
 پھر کربلا کے بن میں بسایا حسین کو

یہ قافلہ تھا کوفے کی جانب رواں دواں 
کر کربلا میں گھیر کے لایا حسین کو

وہ دلبر بتول تھا اور جان مصطفى
 کیا جرم تھا یہی کہ بتایا حسین کو

عباس اور قاسم واکبر ہوئے شہید
 اصغر نے تیر کھا کے رلایا حسین کو

رقم سب چل بسے ظہیر و بریر و حبیب تک 
کوئی نہیں رہا تھا سہارا حسین کو

تنہا نکل رہا ہے حرم سے علی کا لال
 گھیرے ہوئے ہے فوج صف آراء حسین کو

وہ جنگ کی، کہ بدر کا منظر دکھا دیا 
ہر اک نے الامان پکارا حسین کو

اتنے میں ماہ دین گہن میں چلا گی
 تیغ و تبر سے تیر سے مارا حسین کو

نہر فرات پاس تھی پانی نہیں 
پیاسا کیا شہید دل آرا حسین کو

اے کربلا حسین نے تجھ کو لہو دیا
 تو نے نہ ایک قطرہ پلایا حسین کو 

زہرا کے کے گلبدن کا بدن بے کفن کو
 تپتی زمین پر نہ چھپایا حسین کا

جس دل میں عشق سبط نبی کا سما گیا
 اس دل نے پھر کبھی نہ بھلایا حسین ن کو

ناشاد ناتواں کو زیارت نصیب 
یہ التماس بھیجی ہے مولا حسین کو

mehmaan bana ke ghar se bulaya Hussain ko
phir karbalaa ke ban mein basaayaa Hussain ko

yeh qaafla tha kofe ki janib rawan dawaan
kar karbalaa mein ghair ke laya Hussain ko

woh dilbar batool tha aur jaan مصطفى
kya jurm tha yahi ke bataya Hussain ko

abbas aur Qasim واکبر hue shaheed
asghar ne teer kha ke rulaya Hussain ko

raqam sab chal basey Zahir o بریر o habib tak
koi nahi raha tha sahara Hussain ko

tanha nikal raha hai haram se Ali ka laal
ghairay hue hai fouj saf aaraa Hussain ko

woh jung ki, ke badar ka manzar dikha diya
har ik ne alaman puraka Hussain ko

itnay mein mah deen gehan mein chala gi
tegh o تبر se teer se mara Hussain ko

neher furaat paas thi pani nahi
piyasa kya shaheed dil aara Hussain ko

ae karbalaa Hussain ne tujh ko lahoo diya
to ne nah aik qatra pilaya Hussain ko

Zohra ke ke Gulbadan ka badan be kafan ko
tapti zameen par nah chupaya Hussain ka

jis dil mein ishhq Sibt nabi ka sama gaya
is dil ne phir kabhi nah bhulaya Hussain noon ko

Nashad naatvaan ko ziyarat naseeb 
yeh iltamas bhaije hai maula Hussain ko

چھایا ہے کائنات پر پھر غم حسین کا 
آیا ہے پھر پلٹ کے محترم حسین کا

میرے تخیلات پر قابض ہے شاہ دین
 فکر و خیال میرا ہے پیہم حسین کا

نکلا مدینہ چھوڑ کے جب شاہ کربلا
 فرش عزاء بچھا، ہوا ماتم حسین کا

سلے میں بھی امان جو ممکن نہیں ہوئی
نکلا وہاں سے قافلہ پر دم حسین کا

اے خاک کربلا تو بہت خوش نصیب تھی 
تجھ پر بنا جو روضہ اکرم حسین کا

تو سجدہ گاہ جن و بشر بن چکی ہے آج 
تجھ میں حلول ہو گیا جب دم حسین کا

نهر فرات پاس تھی، پیاسا ہوا شہید
 کوثر بھی تھا حسین کا، زمزم حسین کا

دین نبی کو اپنے لہو سے دیا شباب
 اسلام پر یہ قرض نہیں کم حسین کا

عمر دراز مانگ کے روتا رہوں سدا
 پھر بھی یہ غم نہ ہو گا کبھی کم حسین کا

جب تک مری زبان میں جس ، دم میں دم رہے
 لب پر رہے گا اسم مکرم حسین کا

اپنے جواں کے سینے سے برچھی نکال لی 
دیکھیں خلیل، صبر کا عالم حسین کا

پر امن احتجاج ہے یہ ظلم کے خلاف 
سینہ زنی حسین پہ ماتم حسین کا

نام و نشاں یزید کا نابود ہو گیا 
دنیا میں سر بلند ہے پرچم حسین کا

ناشاد ہو گیا ہوں جو میں، بے سبب نہیں 
جاگیر میں ملا ہے، مجھے غم حسین کا

chaaya hai kaayenaat par phir gham Hussain ka
aaya hai phir palat ke mohtaram Hussain ka

mere takhayulaat par qaabiz hai Shah deen
fikar o khayaal mera hai pihm Hussain ka

nikla madinah chore ke jab Shah karbalaa
farsh عزاء bichaa, sun-hwa maatam Hussain ka

silay mein bhi Amaan jo mumkin nahi hui
nikla wahan se qaafla par dam Hussain ka

ae khaak karbalaa to bohat khush naseeb thi
tujh par bana jo roza akram Hussain ka

to sajda gaah jin o bashar ban chuki hai aaj
tujh mein halool ho gaya jab dam Hussain ka

نهر furaat paas thi, piyasa sun-hwa shaheed
kusar bhi tha Hussain ka, zmzm Hussain ka

deen nabi ko –apne lahoo se diya shabab
islam par yeh karzzzz nahi kam Hussain ka

Umar daraaz maang ke rota rahon sada
phir bhi yeh gham nah ho ga kabhi kam Hussain ka

jab tak meri zabaan mein jis, dam mein dam rahay
lab par rahay ga ism mukaram Hussain ka

–apne jawaa ke seenay se barchhi nikaal li
dekhen khalil, sabr ka aalam Hussain ka

par aman ehtijaj hai yeh zulm ke khilaaf
seenah zani Hussain pay maatam Hussain ka

naam o nishaa Yazid ka nabood ho gaya
duniya mein sir buland hai parcham Hussain ka

Nashad ho gaya hon jo mein, be sabab nahi
jageer mein mila hai, mujhe gham Hussain ka

Comments

Popular posts from this blog

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023 Iss Post ma ham apky Urdu kay 300 behtreen or nayaab Quotes share karen gay. Ap tamam se guzarish ha ki is post ko apny friends or family kay sath zaroor share karen. Or hamein shukurya ada karny ka moqa den. shukurya...  

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar