Skip to main content

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar

New Mnaqabat

 New Manqabat

رہائی ملی کلبہ شام سے
حرم چھٹ گیا رنج و آلام سے

بشیر ابن نعمان کو حکم تھا 
سجا محملوں کو بھی زر فام سے

نظر آیا زینب کو اہتمام کہا
ہم نہیں شاد اس کام سے

مصیبت زده قافلے کے لیے 
بدل دے یہ پردے سیہ نام سے

بڑھا قافلہ کربلا کی طرف 
رنج و محن فکر و آلام سے

نبی زادیاں بین کرتی ہویں
ہویں وارد کربلا شام سے 

مزاروں پر گر کر رہے تھے کبھی
قیامت کا منظر تھا کہرام سے

عجب شور محشر تھا میدان میں
غریبوں، یتیموں کے ہمگام سے

یہ کہتے ہوئے کبھی رو رہے تھے
سکینہ نہیں آ سکی شام سے

ستمگر نے بے شیر کی پیاس کو
بجھایا مگر تیر کے جام ہے

بنا تھا ستمگر پلید یزید
نه ڈرتا تھا وہ اپنے انجام سے

وطن میں پہنچ کر نبی زادیاں
لرزتی تھیں زندان کے نام سے

جگر تھام ناشاد اب بس کرو
دعا مانگ تو رب سے آرام سے

rihayi mili کلبہ shaam se
haram chaatt gaya ranj o alaam se

Basheer Ibn Noman ko hukum tha
saja محملوں ko bhi zar faam se

nazar aaya zainab ko ihtimaam kaha
hum nahi shaad is kaam se

museebat زده qaafley ke liye
badal day yeh parday siya naam se

barha qaafla karbalaa ki taraf
ranj o محن fikar o alaam se

nabi زادیاں bain karti ہویں
ہویں warid karbalaa shaam se

mazaron par gir kar rahay thay kabhi
qayamat ka manzar tha kohram se

ajab shore Mahshar tha maidan mein
ghareebon, yatimon ke ہمگام se

yeh kehte hue kabhi ro rahay thay
sakeena nahi aa saki shaam se

ستمگر ne be sher ki pyaas ko
bujhaaya magar teer ke jaam hai

bana tha ستمگر palidh Yazid
نه darta tha woh –apne injaam se

watan mein pahonch kar nabi زادیاں
larazti theen zindaan ke naam se

jigar thaam Nashad ab bas karo
dua maang to rab se aaraam se

میرے لئے ہیں جرز بدن، پنجتن کے نام 
میری زباں پہ حرف حسن، پنجتن کے نام

مشکل میں ہر نبی کو اُنہی سے مدد ملی 
سب نے لئے یہ وقت محسن پنجتن کے نام

مشکل کی ہر گھڑی میں پکارے گئے وہی 
ہے ہر نبی کے زیب دہن پنجتن کے نام

اسمائے مصطفی و علی مرتضی کے ساتھ 
خیر النساء، حسین و حسن، پنجتن کے نام

قائم ہے کائنات انہیں کے طفیل
 حُسنِ بہار، حُسنِ چمن پختن کے نام

عرش علی زینت و زیبا کے واسطے
 تحریر ہیں یہی من و عن پختن کے نام

مر جائیں ہم تو قبر میں ہوں گے نہیں رفیق 
خاک شفا سے لکھ یہ کفن پنجتن کے نام

عطر و گلاب کی مجھے حاجت نہیں رہی ہیں
 میرے ساتھ مُشک ختن پنجتن کے نام

منکر نکیر مجھ سے کرینگے سوال کیا 
میری تو ہے متاع سخن پنجتن کے نام

مجھ کو نہیں ہے گرمی محشر کا کوئی ڈر 
ہیں واں بھی مجھ یه فکن پنجتن کے نام په سایه من

کچھ گر نہیں ہے پاس، مجھے غم نہیں مرے 
فکر و شعور کی ہے لگن پنجتن کے نام

میں بھی تو ہوں غلام غلامانِ اہلبیت 
میری زباں پر ورد حسن پنجتن کے نام

میرے لئے دعا کی اجابت کے واسطے 
بہتر ہیں از عقیق یمن پنجتن کے نام

ناشاد پر نگاہ کرم، یا رسول حق
 جس کی ہے انتہائے سخن پنجتن کے نام

mere liye hain جرز badan, panjtan ke naam
meri zuba pay harf husn, panjtan ke naam

mushkil mein har nabi ko aُnhi se madad mili
sab ne liye yeh waqt mohsin panjtan ke naam

mushkil ki har ghari mein pukare gaye wohi
hai har nabi ke Zaib dahan panjtan ke naam

asmaye mustafa o Ali Murteza ke sath
kher alnisaa, Hussain o husn, panjtan ke naam

qaim hai kaayenaat inhen ke tufail
Husn bahhar, Husn chaman پختن ke naam

arsh Ali zeenat o zaiba ke wastay
tehreer hain yahi mann o an پختن ke naam

mar jayen hum to qabar mein hon ge nahi Rafeeq
khaak Shifa se likh yeh kafan panjtan ke naam

itar o ghulaab ki mujhe haajat nahi rahi hain
mere sath mushk Khitan panjtan ke naam

munkir نکیر mujh se karaingay sawal kya
meri to hai Mataa sukhan panjtan ke naam

mujh ko nahi hai garmi Mahshar ka koi dar
hain wahn bhi mujh yeh فکن panjtan ke naam په سایه mann

kuch gir nahi hai paas, mujhe gham nahi marey
fikar o shaoor ki hai lagan panjtan ke naam

mein bhi to hon ghulam ghlaman ahlbit
meri zuba par vird husn panjtan ke naam

mere liye dua ki ajabat ke wastay
behtar hain az Aqeeq Yemen panjtan ke naam

Nashad par nigah karam, ya rasool haq
jis ki hai ant_haye sukhan panjtan ke naam

Comments

Popular posts from this blog

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023 Iss Post ma ham apky Urdu kay 300 behtreen or nayaab Quotes share karen gay. Ap tamam se guzarish ha ki is post ko apny friends or family kay sath zaroor share karen. Or hamein shukurya ada karny ka moqa den. shukurya...  

Salam Ba Hazoor Imam Hussain

 Salam Ba Hazoor Imam Hussain مہماں بنا کے گھر سے بلایا حسین کو  پھر کربلا کے بن میں بسایا حسین کو یہ قافلہ تھا کوفے کی جانب رواں دواں  کر کربلا میں گھیر کے لایا حسین کو وہ دلبر بتول تھا اور جان مصطفى  کیا جرم تھا یہی کہ بتایا حسین کو عباس اور قاسم واکبر ہوئے شہید  اصغر نے تیر کھا کے رلایا حسین کو رقم سب چل بسے ظہیر و بریر و حبیب تک  کوئی نہیں رہا تھا سہارا حسین کو تنہا نکل رہا ہے حرم سے علی کا لال  گھیرے ہوئے ہے فوج صف آراء حسین کو وہ جنگ کی، کہ بدر کا منظر دکھا دیا  ہر اک نے الامان پکارا حسین کو اتنے میں ماہ دین گہن میں چلا گی  تیغ و تبر سے تیر سے مارا حسین کو نہر فرات پاس تھی پانی نہیں  پیاسا کیا شہید دل آرا حسین کو اے کربلا حسین نے تجھ کو لہو دیا  تو نے نہ ایک قطرہ پلایا حسین کو  زہرا کے کے گلبدن کا بدن بے کفن کو  تپتی زمین پر نہ چھپایا حسین کا جس دل میں عشق سبط نبی کا سما گیا  اس دل نے پھر کبھی نہ بھلایا حسین ن کو ناشاد ناتواں کو زیارت نصیب  یہ التماس بھیجی ہے مولا حسین کو mehmaan bana ke ghar se bulaya Hussain ko phir karbalaa ke ban mein basaayaa Hussain ko yeh qaafla tha kofe k

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar