Skip to main content

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar

Madh Shabbir

 Madh Shabbir

شیر خدا کا لخت جگر ہے مرا حسین 
خیر النساء کا نورِ نظر ہے مرا حسین

سبط نبی کا رتبہ رسول خدا سے پوچھ
 فرماں روائے جن و بشر ہے مرا حسین

خاک شفا حسین کے مرقد کی دھول ہے 
حاجت روا نے عالم زر ہے مرا حسین

فرمان ہے نبی کا کہ میں ہوں حسین سے 
اور ہے حسین مجھ سے، مگر ہے مرا حسین

فخر خلیل خیمه زن نینوا ہوا
 لاکھوں شقی اُدھر ہیں، ادھر ہے مرا حسین

کرب و بلا میں لشکر اعداء کے بیچ میں 
تنہا ہے اور سینہ سپر ہے مرا حسین

دکھلا رہا ہے جو ہر شیخ علی وہ آج
کٹ کٹ کے سر گرے ہیں، جدھر ہے مرا حسین

دین نبی کو شاہ نے شاداب کر دیا
اسلام کی نوید سحر ہے مرا حسین

خالق نے کربلا کو معلیٰ بنا دیا
یہ تو تیرے لہو کا اثر ہے مرا حسین

سب گروفر یزید کے نابود ہو گئے
پائندہ جو ہوا وہ بشر ہے مرا حسین

فردوس میں جوانوں کا سردار بن گیا
اے مومنو بہشت کا در ہے مرا حسین

ناشاد کی حقیر سی کاوش قبول ہو
اُس کا یہی تو زاد سفر ہے، مرا حسین

sher kkhuda ka lakht jigar hai mra Hussain
kher alnisaa ka noore nazar hai mra Hussain

Sibt nabi ka rutba rasool kkhuda se pooch
farmaa rawaye jin o bashar hai mra Hussain

khaak Shifa Hussain ke marqad ki dhool hai
haajat rava ne aalam zar hai mra Hussain

farmaan hai nabi ka ke mein hon Hussain se
aur hai Hussain mujh se, magar hai mra Hussain

fakhr khalil خیمه zan ninwa sun-hwa
lakhoon شقی udhar hain, idhar hai mra Hussain

karb o bulaa mein lashkar اعداء ke beech mein
tanha hai aur seenah super hai mra Hussain

dikhla raha hai jo har Sheikh Ali woh aaj
kat kat ke sir giray hain, jidhar hai mra Hussain

deen nabi ko Shah ne shadaab kar diya
islam ki Naveed sehar hai mra Hussain

khaaliq ne karbalaa ko mualla bana diya
yeh to tairay lahoo ka assar hai mra Hussain

sab گروفر Yazid ke nabood ho gaye
paindah jo sun-hwa woh bashar hai mra Hussain

Firdous mein jawanoo ka sardar ban gaya
ae momino bahisht ka dar hai mra Hussain

Nashad ki haqeer si kawish qubool ho
uss ka yahi to zaad safar hai, mra Hussain

جس کے دل پر ہے اثر شیر کا 
ہے وہ رن میں شیر نر شیر کا

حق سے باطل بر سر پیکار ہے 
اور ہے باطل کو ڈر شہیر کا

یہ عزاء راء خانہ جے جسے کہتے ہیں ہم
در حقیقت ہے ہے یہ گھر شیر کا

آنکھ میں اشک کا قطرہ کا قطرہ ہے گویا آنکھ
اس صدف میں وہ گہر شبیر کا

نوک نیزه سے تلاوت کی صدا
کیوں نہ آئے، یہ ہے سر شیر کا

اجر اتنا ہی تمہیں مل جائیگا
عشق رکھو، جس قدر شیر کا

جام کوثر حشر میں قسمت تری
ماتمی ہے تو اگر شبیر کا

جس کے سینے میں سناں پیوست تھی 
تھا وہی اکبر پسر شبیر کا 

جو نبی کی ہو بہو تصویر تھا
تو تھا لخت جگر شبیر کا

جس قدر سرخی شفق میں ہے عیاں
یہ لہو کا ہے اثر شبیر کا

بحر ذلت میں ہوا غلطاں یزید
ہر جگہ ہے کر و فر شبیر کا

جس کا سایہ دوست داروں پر محیط
حشر میں ہے وہ شجر شبیر کا

خازن جنت ہے تیرا منتظر
تو رہا ہے دوست گر شبیر کا

خوش نصیبی ہے یہی ناشاد ہوں
روح پر ہے یہ اثر شیر کا

jis ke dil par hai assar sher ka
hai woh run mein sher nar sher ka

haq se baatil Bar sir pekaar hai
aur hai baatil ko dar Shahir ka

yeh عزاء راء khanah jay jisay kehte hain hum
dar haqeeqat hai hai yeh ghar sher ka

aankh mein asshk ka qatra ka qatra hai goya aankh
is sadaf mein woh Gohr Shabir ka

noke نیزه se tilawat ki sada
kyun nah aaye, yeh hai sir sher ka

ajar itna hi tumhe mil jaayegaa
ishhq rakho, jis qader sher ka

jaam kusar hashar mein qismat tri
maatami hai to agar Shabir ka

jis ke seenay mein sinaan paivest thi
tha wohi akbar pasar Shabir ka

jo nabi ki ho baho tasweer tha
to tha lakht jigar Shabir ka

jis qader surkhi shafaq mein hai ayaan
yeh lahoo ka hai assar Shabir ka

behar zillat mein sun-hwa ghaltan Yazid
har jagah hai kar o fir Shabir ka

jis ka saya dost daaron par muheet
hashar mein hai woh shajar Shabir ka

Khazen jannat hai tera muntazir
to raha hai dost gir Shabir ka

khush naseebi hai yahi Nashad hon
rooh par hai yeh assar sher ka

Comments

Popular posts from this blog

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023 Iss Post ma ham apky Urdu kay 300 behtreen or nayaab Quotes share karen gay. Ap tamam se guzarish ha ki is post ko apny friends or family kay sath zaroor share karen. Or hamein shukurya ada karny ka moqa den. shukurya...  

Salam Ba Hazoor Imam Hussain

 Salam Ba Hazoor Imam Hussain مہماں بنا کے گھر سے بلایا حسین کو  پھر کربلا کے بن میں بسایا حسین کو یہ قافلہ تھا کوفے کی جانب رواں دواں  کر کربلا میں گھیر کے لایا حسین کو وہ دلبر بتول تھا اور جان مصطفى  کیا جرم تھا یہی کہ بتایا حسین کو عباس اور قاسم واکبر ہوئے شہید  اصغر نے تیر کھا کے رلایا حسین کو رقم سب چل بسے ظہیر و بریر و حبیب تک  کوئی نہیں رہا تھا سہارا حسین کو تنہا نکل رہا ہے حرم سے علی کا لال  گھیرے ہوئے ہے فوج صف آراء حسین کو وہ جنگ کی، کہ بدر کا منظر دکھا دیا  ہر اک نے الامان پکارا حسین کو اتنے میں ماہ دین گہن میں چلا گی  تیغ و تبر سے تیر سے مارا حسین کو نہر فرات پاس تھی پانی نہیں  پیاسا کیا شہید دل آرا حسین کو اے کربلا حسین نے تجھ کو لہو دیا  تو نے نہ ایک قطرہ پلایا حسین کو  زہرا کے کے گلبدن کا بدن بے کفن کو  تپتی زمین پر نہ چھپایا حسین کا جس دل میں عشق سبط نبی کا سما گیا  اس دل نے پھر کبھی نہ بھلایا حسین ن کو ناشاد ناتواں کو زیارت نصیب  یہ التماس بھیجی ہے مولا حسین کو mehmaan bana ke ghar se bulaya Hussain ko phir karbalaa ke ban mein basaayaa Hussain ko yeh qaafla tha kofe k

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar