Skip to main content

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar

Imam Hussain Ko Salam

Imam Hussain Ko Salam


 دشت خونخوار میں لخت دل حیدر آیا 

ساحل چشم پہ اشکوں کا سمندر آیا


جب بڑھا دین کی گردن کی طرف

 ظلم کا ہاتھ روکنے کے لئے فرزند پیمبر آیا


ذکر شیر کہاں تک نہ سُنے گا کوئی

 یہ ہے وہ ذکر جو ہر ایک کے لب پر آیا


اک طرف فوج یزید، ایک طرف صرف حسین

معرکہ ہو نہیں سکتا تھا، جو وہ کر آیا


جز حسین ابن علی کس کو یہ اعزاز ملا

 نوکِ نیزہ پر بھی قرآں جسے ازبر آیا 


کس نے نابود کیا ظلم کے ایوانوں کو 

کون اسلام بچانے کو بکف سر آیا


کربلا کیوں نہ تری خاک پہ اب سجدہ کریں

تیری قسمت میں جو ثقلین کا گوہر آیا 


حرمله تیر سه شعبه جو چلایا تو نے

 کیا تبسم تھا جو معصوم کے لب لب پر آیا 


خشک ہونٹوں کا ہلانا تھا علی اصغر کا 

جام کوثر کا لئے ساقی کوثر آیا


 علقمہ خاک ہو تجھ پر کہ ترے ساحل سے 

ایک قطرہ نہ سکینہ کو میتر آیا


 علی اکبر کی اذاں، صبح کو عاشور کے دن 

من کے کفار کے لشکر کو بھی چکر آیا 


غل مچا فوج یزیدی میں کہ آئے ہیں رسول 

لے کے شمشیر جو زن میں علی اکبر آیا 


اے علمدار جری! تجھ کو سکینہ کی قسم

چند حاجات لئے میں تیرے در پر آیا


میں ہوں ناشاد، عزادار حسین ابن علی

میری بخشش کے لئے شافع محشر آیا


dasht khonkhawar mein lakht dil Haider aaya

saahil chasham pay ashkon ka samandar aaya


jab barha deen ki gardan ki taraf

zulm ka haath roknay ke liye Farzand peyambar aaya


zikar sher kahan tak nah sunay ga koi

yeh hai woh zikar jo har aik ke lab par aaya


ik taraf fouj Yazid , aik taraf sirf Hussain

maarka ho nahi sakta tha, jo woh kar aaya


juz Hussain Ibn Ali kis ko yeh aizaz mila

noke nezah par bhi qraan jisay azber aaya


kis ne nabood kya zulm ke aiwanon ko

kon islam bachanay ko bakaf sir aaya


karbalaa kyun nah tri khaak pay ab sajda karen

teri qismat mein jo Saqlain ka gohar aaya


حرمله teer سه شعبه jo chalaya to ne

kya tabassum tha jo masoom ke lab lab par aaya


khushk honton ka hilaana tha Ali asghar ka

jaam kusar ka liye saqi kusar aaya


alqmh khaak ho tujh par ke tre saahil se

aik qatra nah sakeena ko میتر aaya


Ali akbar ki azan, subah ko aashor ke din

mann ke kufar ke lashkar ko bhi chakkar aaya


ghul macha fouj یزیدی mein ke aaye hain rasool

le ke Shamsheer jo zan mein Ali akbar aaya


ae Alamdar Jarry ! tujh ko sakeena ki qisam

chand hajat liye mein tairay dar par aaya


mein hon Nashad , azadar Hussain Ibn Ali

meri bakhshish ke liye Shafey Mahshar aaya


زہرا کا چین، دادی رنج و محسن میں ہے 

سبط رسول کرب و بلا کے چمن میں ہے


گنبه تمام خامس آل عبا کے ساتھ

 تنها علیل فاطمہ صغرا وطن میں ہے


سن کر اذان صبح یہ اعداء بھی کہہ اُٹھے

 لحن رسول اکبر شیریں سخن میں ہے


تیر سه شعبہ کھا کے بھی وہ مسکرائے ہیں

 کتنا یہ صبر اصغر غنچہ دہن میں ہے


عباس اور قائم و اکبر ہوئے شہید

 محشر بپا خیام امام زمن میں ہے


چھایا ہے ابر ظلم، لرزتی ہے کربلا ہے

 سجدے میں ہےحسین کہ سورج گہن میں ہے


مہ کا ہوا ہے سارا بیابان خوشبو یہ

 شاہ کے جید بے کفن میں ہے


وہ انتہائے ظلم، تو یہ انتہائے صبر

 بیمار کا گلا ہے، جو طوق و رسن میں ہے


دوڑا دئے ہیں لاشوں پہ گھوڑے لعین نے 

غوغائے الاماں، حرم پنجتن میں ہے


گھر بار سب اُجڑ چکے، خیمے بھی جل چکے 

ایک عزم پھر بھی زینب گل پیرہن میں ہے


 از ما سلام قافله پاک کربلا! 

ہر فرد جس کا نخستہ جگر اپنے من میں ہے 


مولا! مرا سلام عقیدت قبول ہو

 ناشاد ناتوان رہ پر فتن میں ہے


Zohra ka chain, dadi ranj o mohsin mein hai

Sibt rasool karb o bulaa ke chaman mein hai


گنبه tamam Khamiss all Aba ke sath

تنها aleel fatima sghra watan mein hai


sun kar azaan subah yeh اعداء bhi keh uthay

lehan rasool akbar sheree sukhan mein hai


teer سه shoba kha ke bhi woh muskuraye hain

kitna yeh sabr asghar Ghuncha dahan mein hai


abbas aur qaim o akbar hue shaheed

Mahshar bapaa khaime imam Zamn mein hai


chaaya hai abr zulm, larazti hai karbalaa hai

sjday mein hai Hussain ke Sooraj gehan mein hai


Meh ka sun-hwa hai sara biyabaan khushbu yeh

Shah ke Jayyad be kafan mein hai


woh ant_haye zulm, to yeh ant_haye sabr

bemaar ka gala hai, jo taoq o rasan mein hai


dora diye hain laashon pay ghoray Laeen ne

غوغائے الاماں, haram panjtan mein hai


ghar baar sab ujadh chuke, khaimay bhi jal chuke

aik azm phir bhi zainab Gul perhan mein hai


az ma salam قافله pak karbalaa !

har fard jis ka نخستہ jigar –apne mann mein hai


maula! mra salam aqeedat qubool ho

Nashad natwaan reh par fitan mein hai


Comments

Popular posts from this blog

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023 Iss Post ma ham apky Urdu kay 300 behtreen or nayaab Quotes share karen gay. Ap tamam se guzarish ha ki is post ko apny friends or family kay sath zaroor share karen. Or hamein shukurya ada karny ka moqa den. shukurya...  

Salam Ba Hazoor Imam Hussain

 Salam Ba Hazoor Imam Hussain مہماں بنا کے گھر سے بلایا حسین کو  پھر کربلا کے بن میں بسایا حسین کو یہ قافلہ تھا کوفے کی جانب رواں دواں  کر کربلا میں گھیر کے لایا حسین کو وہ دلبر بتول تھا اور جان مصطفى  کیا جرم تھا یہی کہ بتایا حسین کو عباس اور قاسم واکبر ہوئے شہید  اصغر نے تیر کھا کے رلایا حسین کو رقم سب چل بسے ظہیر و بریر و حبیب تک  کوئی نہیں رہا تھا سہارا حسین کو تنہا نکل رہا ہے حرم سے علی کا لال  گھیرے ہوئے ہے فوج صف آراء حسین کو وہ جنگ کی، کہ بدر کا منظر دکھا دیا  ہر اک نے الامان پکارا حسین کو اتنے میں ماہ دین گہن میں چلا گی  تیغ و تبر سے تیر سے مارا حسین کو نہر فرات پاس تھی پانی نہیں  پیاسا کیا شہید دل آرا حسین کو اے کربلا حسین نے تجھ کو لہو دیا  تو نے نہ ایک قطرہ پلایا حسین کو  زہرا کے کے گلبدن کا بدن بے کفن کو  تپتی زمین پر نہ چھپایا حسین کا جس دل میں عشق سبط نبی کا سما گیا  اس دل نے پھر کبھی نہ بھلایا حسین ن کو ناشاد ناتواں کو زیارت نصیب  یہ التماس بھیجی ہے مولا حسین کو mehmaan bana ke ghar se bulaya Hussain ko phir karbalaa ke ban mein basaayaa Hussain ko yeh qaafla tha kofe k

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar