Skip to main content

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar

Imam Hassan

 Imam Hassan

السلام اے محبت حق، حافظ ام الکتاب 
ابن حیدر، نور حق، سبط نبی عزت مآب

جب بھی اسم مجتبی میری زبان پر آ گیا 
ساتھ ہی صلوات سے بھی ہو چکا ہوں فیض یاب

نرم خوئی، صلح جوئی، اُن کی خصلت بن گئی 
جب دیا صلح حسن" نے دین کو تازہ شباب

کم نہیں اسلام پر دائم یہ احسانِ حسن 
راه صلح و آشتی کو کر دیا ہے انتخاب

مجتبیٰ نے کر دیا اسلام کا پرچم بلند 
ملحدوں کو حکمت عملی سے کر کے لا جواب

وہ غریبوں کا سہارا اور یتیموں کا کفیل 
مستحق افراد تھے زیر کفالت بے حساب

عظمتِ اسلام کا حافظ ہے کردار حسن 
کُفر کی سازش کو جس نے کر دیا ہے بے نقاب

دامن زہرا میں اُترا نیمہ رمضان کو
 نازش کون و مکاں وہ نورِ عین بو تراب

مفخر ایوب شہر، صبر کے میدان میں 
دیکھ کر حسن حسن، یوسف ہوا ہے آب آب

شبر و شبیر سردار جوانان بهشت
 راکب دوش بنی، ختم الرسل والا جناب

عرش سے کم تر نہیں ہے بیت زہرا کا مقام 
پنجتن کے نور سے یہ گھر ہوا ہے بہرہ یاب

یا الہی ہے یہی میری دعا بہر بتول
 عرصہ محشر میں ہو ناشاد پر دائم سحاب

salam ae mohabbat haq, Hafiz umm al-kitab
Ibn Haider , noor haq, Sibt nabi izzat maab

jab bhi ism Mujtaba meri zabaan par aa gaya
sath hi slwat se bhi ho chuka hon Faiz yab

naram khoi, sulah joi, unn ki khaslat ban gayi
jab diya sulah husn" ne deen ko taaza shabab

kam nahi islam par daaim yeh ehsan-e husn
راه sulah o aashtee ko kar diya hai intikhab

Mujtaba ne kar diya islam ka parcham buland
ملحدوں ko hikmat e amli se kar ke laa jawab

woh ghareebon ka sahara aur yatimon ka kafeel
mustahiq afraad thay zair kifalat be hisaab

azmat islam ka Hafiz hai kirdaar husn
kufar ki saazish ko jis ne kar diya hai be naqaab

daman Zohra mein utra نیمہ ramadaan ko
nazish kon o makan woh noore ain bo Terab

مفخر ayub shehar, sabr ke maidan mein
dekh kar husn husn, Yousuf sun-hwa hai aabb aabb

Shabbir o Shabir sardar جوانان بهشت
raakib dosh bani, khatam alrsl wala janab

arsh se kam tar nahi hai beeet Zohra ka maqam
panjtan ke noor se yeh ghar sun-hwa hai behra yab

ya ellahi hai yahi meri dua bahar batool
arsa Mahshar mein ho Nashad par daaim Sahab

شیر خدا کا لخت جگر، مجتبی حسن
 خیر النساء کا نورِ نظر، مجتبی حسن

صبر و رضا میں وارث خیر الانام تھے 
تھے جانشین شاہ ظفر، مجتبی حسن

اُن کا بیان سن کے شقی بھی بنے سعید 
خطبوں میں رکھتے تھے وہ اثر، مجتبیٰ حسن

سردار بن گئے وہ جوانانِ خُلد کے
 جنت تھی جن کا گھر وہ بشر، مجتبی حسن

ان بھائیوں کی مصلحتیں تھیں جُدا جدا 
اونچے تھے مرتبے میں مگر، مجتبیٰ حسن

قربانی حسین کا چرچا ہے آج بھی
 تھے صلح و آشتی کا ظفر، مجتبیٰ حسن

جن کا ظہور نیمہ رمضان کو ہوا 
وہ بادشاه جن و بشر، مجتبی حسن

باغ سخن میں کیوں نہ معطر کلام ہو 
پاکیزہ خوشبوؤں کا شجر، مجتبی حسن

دیکھا جو جلوہ آپ کا تو ماند پڑ گئے 
تارے تو کیا، یہ شمس و قمر، مجتبی حسن

اس گھر میں تہنیت کو فرشتوں کا ہے ہجوم 
آیا جو مرتضی کا پر، مجتبیٰ حسن

مولا! حقیر سے بھی ہو یہ تہنیت قبول 
میری ہے سجدہ گاہ یه در مجتبی حسن

ادنی غلام اک تیرا رنج و محن میں ہے
 اُس پر کرم کی اک ہو نظر، مجتبیٰ حسن

ناشاد آج شاد ہے، بزم حسن میں ہے
 شادان ہے وہ شام و سحر، مجتبیٰ حسن

sher kkhuda ka lakht jigar, Mujtaba husn
kher alnisaa ka noore nazar, Mujtaba husn

sabr o Raza mein waris kher الانام thay
thay janasheen Shah Zafar , Mujtaba husn

unn ka bayan sun ke شقی bhi banay Saeed
khtbon mein rakhtay thay woh assar, Mujtaba husn

sardar ban gaye woh jwananِ khuld ke
jannat thi jin ka ghar woh bashar, Mujtaba husn

un bhaiyon ki mslhtin theen juda judda
ounchay thay martabay mein magar, Mujtaba husn

qurbani Hussain ka charcha hai aaj bhi
thay sulah o aashtee ka Zafar , Mujtaba husn

jin ka zahuur نیمہ ramadaan ko sun-hwa
woh بادشاه jin o bashar, Mujtaba husn

baagh sukhan mein kyun nah muattar kalaam ho
pakeeza khushbuon ka shajar, Mujtaba husn

dekha jo jalva aap ka to maand par gaye
tarre to kya, yeh Shams o Qamar , Mujtaba husn

is ghar mein Tahiniat ko firshton ka hai hajhoom
aaya jo Murteza ka par, Mujtaba husn

maula! haqeer se bhi ho yeh Tahiniat qubool
meri hai sajda gaah yeh dar Mujtaba husn

adna ghulam ik tera ranj o محن mein hai
uss par karam ki ik ho nazar, Mujtaba husn

Nashad aaj shaad hai, bazm husn mein hai
شادان hai woh shaam o sehar, Mujtaba husn

Comments

Popular posts from this blog

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023 Iss Post ma ham apky Urdu kay 300 behtreen or nayaab Quotes share karen gay. Ap tamam se guzarish ha ki is post ko apny friends or family kay sath zaroor share karen. Or hamein shukurya ada karny ka moqa den. shukurya...  

Salam Ba Hazoor Imam Hussain

 Salam Ba Hazoor Imam Hussain مہماں بنا کے گھر سے بلایا حسین کو  پھر کربلا کے بن میں بسایا حسین کو یہ قافلہ تھا کوفے کی جانب رواں دواں  کر کربلا میں گھیر کے لایا حسین کو وہ دلبر بتول تھا اور جان مصطفى  کیا جرم تھا یہی کہ بتایا حسین کو عباس اور قاسم واکبر ہوئے شہید  اصغر نے تیر کھا کے رلایا حسین کو رقم سب چل بسے ظہیر و بریر و حبیب تک  کوئی نہیں رہا تھا سہارا حسین کو تنہا نکل رہا ہے حرم سے علی کا لال  گھیرے ہوئے ہے فوج صف آراء حسین کو وہ جنگ کی، کہ بدر کا منظر دکھا دیا  ہر اک نے الامان پکارا حسین کو اتنے میں ماہ دین گہن میں چلا گی  تیغ و تبر سے تیر سے مارا حسین کو نہر فرات پاس تھی پانی نہیں  پیاسا کیا شہید دل آرا حسین کو اے کربلا حسین نے تجھ کو لہو دیا  تو نے نہ ایک قطرہ پلایا حسین کو  زہرا کے کے گلبدن کا بدن بے کفن کو  تپتی زمین پر نہ چھپایا حسین کا جس دل میں عشق سبط نبی کا سما گیا  اس دل نے پھر کبھی نہ بھلایا حسین ن کو ناشاد ناتواں کو زیارت نصیب  یہ التماس بھیجی ہے مولا حسین کو mehmaan bana ke ghar se bulaya Hussain ko phir karbalaa ke ban mein basaayaa Hussain ko yeh qaafla tha kofe k

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar