Skip to main content

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar

نئی ہوائیں چلی ہیں چراغ کندکی اور

 

نئی ہوائیں چلی ہیں چراغ کندکی اور

قوموں کی زندگی میں تقلیب کا عمل  جاری رہتا ہے  بعض اوقات شکست کے مرحلے میں خیالات منتشر ہونے لگتے ہیں ہیں حالانکہ تقلیب کے عمل کی تکمیل ریخت سے ہوتی ہے۔ گویا شکست و ریخت بظاہر دو طرفہ عمل ہیں مگر اپنی اصل میں یہ دونوں ایک ہیں لیکن اس صورت میں جب محرکات مثبت ہوں ورنہ یہ منقلب ہونے کی بجائے کار تخریب کہلائے گا۔ ہم قیام پاکستان سے ہی اس عمل سے گزر رہے ہیں اور ہنوز ہمارے اندر تبدیلیاں رونما ہو رہی ہیں یہ تغیرات کہیں فکری سطح پر طلوع ہوتے ہیں تو کہیں عملی تہ پر۔ دونوں سطحوں پر اس کے اثرات پوری طرح جگمگاتے ہیں دراصل ہیں اثر پذیری سے بڑھ کر تعامل کا مرحلہ ہے جہاں بہت کچھ تبدیل ہوتا ہے جہاں سبب اور مسبب گاہے یکجا ہوتے ہیں اور کبھی کبھی ان میں سے ایک پس منظر میں چلا جاتا ہے ہے ایسے میں صحیح اندازہ لگانا قدرے مشکل ہو جاتا ہے ہے اسی وجہ سے صحیح ذہنیت رکھنے والے لوگ بھٹک جاتے ہیں وہ تندرست میں ہوتے ہیں لیکن وسیع تناظر میں ایسا نہیں ہوتا۔

فکر کی اس قدر کجی کو رفع کرنے کی خاطر لازم ہیں کہ قوم کی ان سطور پر تربیت کی جائے جہاں آفاقیت کا اظہار موجود ہو جہاں امکانات و ادراک کے دراوڑ رہتے ہو جہاں ارتقائی بوقلمونیون یو کا کھلے ظرف سے مظاہرہ کرنے کا حوصلہ ہوں میں اسے بدقسمتی ہرگز نہیں کہوں گا کہ ہم قدرے سمت سے ہٹ کر پیش قدمی کر رہے ہیں بلکہ میرے نزدیک یہ تربیت کی خامی ہیں جہاں مادیت پرستی کا منہ زور ہاتھی ہر چیز کو روندتا چلا جاتا ہو وہاں شخصیت سازی اور عملی تربیت کی باتیں خواب ہو جاتی ہے ۔ جہاں اسی قدروں کو زر پرستی کے گھروں میں پھینکنے کی صحیح کی جاتی ہوں وہاں لازم ہوتا ہے کہ ایسے روش کا خاتمہ کیا جائے اسی لئے کہ انسانیت کی بنیادی قدروں میں حسن اخلاق دیانتداری راست گوئی اور صحیح نظریات مقدم ہے ۔ مادیت پرستی کا کا رجحان انہیں قدروں کا کھلا دشمن ہے دراصل یہ رجحان نیا نہیں ہے  زمانے سے جڑا ہوا ہے ملکیت کا احساس اور فعل معلوم نال میں جائز و ناجائز ذرائع سے بڑھوتری کی تمنا دراصل اسی پرانے نظریے کی دین ہے


qomon ki zindagi mein taqleeb ka amal jari rehta hai baaz auqaat shikast ke marhalay mein khayalat muntashir honay lagtay hain hain halaank taqleeb ke amal ki takmeel reekht se hoti hai. goya shikast o reekht bzahir do Tarfah amal hain magar apni asal mein yeh dono aik hain lekin is soorat mein jab muharikaat misbet hon warna yeh munqalib honay ki bajaye car takhreeb kehlaye ga. hum qiyam Pakistan se hi is amal se guzar rahay hain aur hanooz hamaray andar tabdeelian runuma ho rahi hain yeh tagayuraat kahin fikri satah par tulu hotay hain to kahin amli teh par. dono sthon par is ke asraat poori terhan jagmagaty hain darasal hain assar pazeeri se barh kar taamul ka marhala hai jahan bohat kuch tabdeel hota hai jahan sabab aur msbb gaahay yakja hotay hain aur kabhi kabhi un mein se aik pas manzar mein chala jata hai hai aisay mein sahih andaza lagana qadray mushkil ho jata hai hai isi wajah se sahih zehniat rakhnay walay log bhatak jatay hain woh tandrost mein hotay hain lekin wasee tanazur mein aisa nahi hota .

fikar ki is qader kajji ko rafa karne ki khatir lazim hain ke qoum ki un stor par tarbiyat ki jaye jahan aafaqiat ka izhaar mojood ho jahan imkanaat o idraak ke Drawar rehtay ho jahan irtiqai بوقلمونیون you ka khulay zarf se muzahira karne ka hosla hon mein usay bad qismati hargiz nahi kahoon ga ke hum qadray simt se hatt kar paish qadmi kar rahay hain balkay mere nazdeek yeh tarbiyat ki khaami hain jahan madiyat parasti ka mun zor hathi har cheez ko rondta chala jata ho wahan shakhsiyat saazi aur amli tarbiyat ki baatein khawab ho jati hai. jahan isi qadron ko zar parasti ke gharon mein phainknay ki sahih ki jati hon wahan lazim hota hai ke aisay rawish ka khtama kya jaye isi liye ke insaaniyat ki bunyadi qadron mein husn ikhlaq dayanatdari raast goi aur sahih nazriaat muqaddam hai. madiyat parasti ka ka rujhan inhen qadron ka khula dushman hai darasal yeh rujhan naya nahi hai zamane se jura sun-hwa hai malkiat ka ehsas aur feal maloom naal mein jaaiz o najaaiz zaraye se brhhotri ki tamanna darasal isi puranay nazriye ki deen hai

Comments

Popular posts from this blog

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023 Iss Post ma ham apky Urdu kay 300 behtreen or nayaab Quotes share karen gay. Ap tamam se guzarish ha ki is post ko apny friends or family kay sath zaroor share karen. Or hamein shukurya ada karny ka moqa den. shukurya...  

Salam Ba Hazoor Imam Hussain

 Salam Ba Hazoor Imam Hussain مہماں بنا کے گھر سے بلایا حسین کو  پھر کربلا کے بن میں بسایا حسین کو یہ قافلہ تھا کوفے کی جانب رواں دواں  کر کربلا میں گھیر کے لایا حسین کو وہ دلبر بتول تھا اور جان مصطفى  کیا جرم تھا یہی کہ بتایا حسین کو عباس اور قاسم واکبر ہوئے شہید  اصغر نے تیر کھا کے رلایا حسین کو رقم سب چل بسے ظہیر و بریر و حبیب تک  کوئی نہیں رہا تھا سہارا حسین کو تنہا نکل رہا ہے حرم سے علی کا لال  گھیرے ہوئے ہے فوج صف آراء حسین کو وہ جنگ کی، کہ بدر کا منظر دکھا دیا  ہر اک نے الامان پکارا حسین کو اتنے میں ماہ دین گہن میں چلا گی  تیغ و تبر سے تیر سے مارا حسین کو نہر فرات پاس تھی پانی نہیں  پیاسا کیا شہید دل آرا حسین کو اے کربلا حسین نے تجھ کو لہو دیا  تو نے نہ ایک قطرہ پلایا حسین کو  زہرا کے کے گلبدن کا بدن بے کفن کو  تپتی زمین پر نہ چھپایا حسین کا جس دل میں عشق سبط نبی کا سما گیا  اس دل نے پھر کبھی نہ بھلایا حسین ن کو ناشاد ناتواں کو زیارت نصیب  یہ التماس بھیجی ہے مولا حسین کو mehmaan bana ke ghar se bulaya Hussain ko phir karbalaa ke ban mein basaayaa Hussain ko yeh qaafla tha kofe k

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar