Skip to main content

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar

Negative effects of mobile phones

Negative effects of mobile phones

 موبائل فون کے منفی اثرات

موبائل فون کا استعمال تیزی سے بڑھتا جا رہا ہے اور آئندہ چند برسوں میں موبائل فون رکھنے والوں کی تعداد ایک ارب تک پہنچ جائے گی۔ ابتدا میں موبائل فون کو دکھاوے یا فیشن کا ذریعہ سمجھا جاتا تھا ۔ اب اس کا استعمال اتنا عام ہوچکا ہے کہ یہ آہستہ آہستہ روزمرہ کی ضرورت بنتا جا رہا ہے ۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ موبائل فون کے بہت سے فائدے ہیں ۔ اس نے زندگی کو کافی سہل بنادیا ہے لیکن بہت سے فوائد کے باوجود نئی تحقیقات اس سے ہونے والے نقصانات کو ظاہر کر رہی ہے ۔ ایک طرف اس کی وجہ سے سماجی مسائل پیدا ہورہے ہیں تو دوسری طرف طبی ماہرین اس سے بچنے کا مشورہ دیتے دکھائی دیتے ہیں ۔ سماجی زندگی میں موبائل فون سے جرائم پیشہ عناصر نے بہت زیادہ فائدہ اٹھایا ہے ۔ گزشتہ سالوں میں دنیا کے کئی سکول اور کالجوں میں بچے موبائل فون کے ذریعے امتحانات میں نقل کرتے ہوئے پکڑے گئے ہیں ۔ بجٹ میں اضافہ ، وقت کا ضیاع اور دفتروں ،دکانوں اور لوگوں کی محفلوں میں وقت بے وقت بجتی موبائل کی گھنٹیاں لوگوں کو پریشان کرتی ہیں اور اس سے دوسروں کے کام کا بھی بہت نقصان ہے۔ بہت سی تحقیقات کے بعد ماہرین تنبیہ کرتے ہیں کہ ڈرائیونگ کرتے ہوئے موبائل فون کا استعمال ہرگز نہ کریں کیونکہ اس طرح ذہن نوے فیصد گفتگو کی طرف متوجہ ہوتا ہے جبکہ ڈرائیونگ میں سو فیصد توجہ سڑک پر مرکوز ہونی چاہیئے ورنہ حادثات کا خطرہ ہوتا ہے ۔ طبی لحاظ سے موبائل فون کے مضر اثرات کے بارے میں تحقیقات جاری ہیں اور کئی حوالوں سے اسے صحت کے لیے انتہائی ہولناک قرار دیا گیا ہے ۔ اس کا ضرورت سے زیادہ استعمال کینسر ، اعصابی امراض ، کان کی تکلیف ، دل کی بیماری موٹاپے اور ذہنی بیماریوں کا باعث بن سکتا ہے ۔ موبائل فون سے جو ریڈیائی لہریں نکلتی ہیں ان سے عام سرطان کے مقابلے میں دماغ کے سرطان کا خطرہ دگنا ہوجاتا ہے۔ یہ ریڈیائی لہریں جہاں دماغ کو نقصان پہنچاتی ہیں وہیں ایک اور تحقیق کے مطابق یہ کانوں کے امراض کا باعث بھی بنتے ہیں۔جدید فون میں وائبریشن کا نظام بھی ہے ۔ جب کوئی کال آتی ہے تو موبائل سیٹ تھر تھرا نے لگتا ہے۔ ماہرین اور امراض قلب کا کہنا ہے کہ موبائل فونز دل کے پاس نہ رکھیں کیونکہ فون کی وائبریشن براہ راست دل پر اثر انداز ہوتی ہیں اور دل ڈوبتا ہوا محسوس ہوتا ہے اور اس کی دھڑکن غیر متوازن ہوجاتی ہے دل کے مریضوں کو تو ایسے فونز استعمال ہی نہیں کرنی چاہیئے ۔

حال ہی میں برطانیہ میں ایک نئی تحقیق منظر عام پر آئی ہے جس کے مطابق موبائل کا استعمال کرنے والے موٹاپے کا بہت جلد شکار ہو جاتے ہیں کیونکہ ایسے لوگ تن آسان ہو جاتے ہیں جو کام انہیں پہلے خود چل کر کرنے پڑتے تھے اور جس سے ان کے پاؤں حرکت میں رہتے تھے اب موبائل فون کی وجہ سے بیٹھے بیٹھے وہ کام ہو جاتے ہیں اور زیادہ بیٹھنے کی وجہ سے جسم فربہ ہو جاتا ہے ۔ سائنس دانوں کا کہنا ہے کہ موبائل فون کے انسانی صحت اور انسانی جان پر برے اثرات پڑتے ہیں اس لئے ان کا استعمال بہت کم ہونا چاہیے ۔ ورنہ یہ فائدے کی بجائے نقصان کا سبب بنیں گے

mobile phone ke manfi asraat

mobile phone ka istemaal taizi se barhta ja raha hai aur aindah chand barson mein mobile phone rakhnay walon ki tadaad 1 arab tak pahonch jaye gi. ibtida mein mobile phone ko dikhavay ya fashion ka zareya samjha jata tha. ab is ka istemaal itna aam hochuka hai ke yeh aahista aahista roz marrah ki zaroorat bantaa ja raha hai. is mein koi shak nahi ke mobile phone ke bohat se faiday hain. is ne zindagi ko kaafi sahal banadiya hai lekin bohat se fawaid ke bawajood nai tehqiqaat is se honay walay nuqsanaat ko zahir kar rahi hai. aik taraf is ki wajah se samaji masail peda ho rahay hain to doosri taraf tibbi mahireen is se bachney ka mahswara dete dikhayi dete hain. samaji zindagi mein mobile phone se juraim pesha anasir ne bohat ziyada faida uthaya hai. guzashta saloon mein duniya ke kayi shool aur collegeon mein bachay mobile phone ke zariye imtehanaat mein naqal karte hue pakdae gaye hain. budget mein izafah, waqt ka zeyaa aur dftron, dukanon aur logon ki mehafilon mein waqt be waqt bajti mobile ki ghantiyan logon ko pareshan karti hain aur is se doosron ke kaam ka bhi bohat nuqsaan hai. bohat si tehqiqaat ke baad mahireen tanbeeh karte hain ke driving karte hue mobile phone ka istemaal hargiz nah karen kyunkay is terhan zehen nawway feesad guftagu ki taraf mutwajjah hota hai jabkay driving mein so feesad tawajah sarrak par markooz honi chahiye warna hadsaat ka khatrah hota hai. tibbi lehaaz se mobile phone ke muzir asraat ke baray mein tehqiqaat jari hain aur kayi hawalon se usay sehat ke liye intehai holnaak qarar diya gaya hai. is ka zaroorat se ziyada istemaal cancer, aasabi amraaz, kaan ki takleef, dil ki bemari motapay aur zehni bimarion ka baais ban sakta hai. mobile phone se jo rediyai laharen nikalti hain un se aam sartaan ke muqablay mein dimagh ke sartaan ka khatrah dugna hojata hai. yeh rediyai laharen jahan dimagh ko nuqsaan pohanchati hain wahein aik aur tehqeeq ke mutabiq yeh kaanon ke amraaz ka baais bhi bantay hain. jadeed phone mein وائبریشن ka nizaam bhi hai. jab koi cal aati hai to mobile set thar تھرا ne lagta hai. mahireen aur amraaz qalb ka kehna hai ke mobile phones dil ke paas nah rakhen kyunkay phone ki وائبریشن barah e raast dil par assar andaaz hoti hain aur dil dobta sun-hwa mehsoos hota hai aur is ki dharkan ghair mutawazan hojati hai dil ke mareezon ko to aisay phones istemaal hi nahi karni chahiye .

haal hi mein Bartania mein aik nai tehqeeq manzar aam par aayi hai jis ke mutabiq mobile ka istemaal karne walay motapay ka bohat jald shikaar ho jatay hain kyunkay aisay log tan aasaan ho jatay hain jo kaam inhen pehlay khud chal kar karne parte thay aur jis se un ke paon harkat mein rehtay thay ab mobile phone ki wajah se baithy baithy woh kaam ho jatay hain aur ziyada bethnay ki wajah se jism farba ho jata hai. science daano ka kehna hai ke mobile phone ke insani sehat aur insani jaan par buray asraat parte hain is liye un ka istemaal bohat kam hona chahiye. warna yeh faiday ki bajaye nuqsaan ka sabab banin ge

Comments

Popular posts from this blog

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023 Iss Post ma ham apky Urdu kay 300 behtreen or nayaab Quotes share karen gay. Ap tamam se guzarish ha ki is post ko apny friends or family kay sath zaroor share karen. Or hamein shukurya ada karny ka moqa den. shukurya...  

Salam Ba Hazoor Imam Hussain

 Salam Ba Hazoor Imam Hussain مہماں بنا کے گھر سے بلایا حسین کو  پھر کربلا کے بن میں بسایا حسین کو یہ قافلہ تھا کوفے کی جانب رواں دواں  کر کربلا میں گھیر کے لایا حسین کو وہ دلبر بتول تھا اور جان مصطفى  کیا جرم تھا یہی کہ بتایا حسین کو عباس اور قاسم واکبر ہوئے شہید  اصغر نے تیر کھا کے رلایا حسین کو رقم سب چل بسے ظہیر و بریر و حبیب تک  کوئی نہیں رہا تھا سہارا حسین کو تنہا نکل رہا ہے حرم سے علی کا لال  گھیرے ہوئے ہے فوج صف آراء حسین کو وہ جنگ کی، کہ بدر کا منظر دکھا دیا  ہر اک نے الامان پکارا حسین کو اتنے میں ماہ دین گہن میں چلا گی  تیغ و تبر سے تیر سے مارا حسین کو نہر فرات پاس تھی پانی نہیں  پیاسا کیا شہید دل آرا حسین کو اے کربلا حسین نے تجھ کو لہو دیا  تو نے نہ ایک قطرہ پلایا حسین کو  زہرا کے کے گلبدن کا بدن بے کفن کو  تپتی زمین پر نہ چھپایا حسین کا جس دل میں عشق سبط نبی کا سما گیا  اس دل نے پھر کبھی نہ بھلایا حسین ن کو ناشاد ناتواں کو زیارت نصیب  یہ التماس بھیجی ہے مولا حسین کو mehmaan bana ke ghar se bulaya Hussain ko phir karbalaa ke ban mein basaayaa Hussain ko yeh qaafla tha kofe k

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar