Skip to main content

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar

Multan ki tareekh

Multan ki tareekh

ملتان کی تاریخ

ملتان کو اولیائے کرام کی سرزمین کہا جاتا ہے ہے اس بنا پر ایک ہفتہ پاکستان میں ایک خاص مقام رکھتا ہے ان صوفیاء میں حضرت شاہ شمس حضرت اور شاہ رکن عالم نمایاں ہیں ہیں ان کی سرزمین نے کی صوفی شعراء پیدا کیے جنہوں نے صوفیانہ شاعری کو تقویت دی ان میں شاکر شجاع آبادی بڑی اہمیت کے حامل ہے

م شیخ ملتان کی قدامت پر غور کریں  موہنجودارو اور ہر بات پر جیسے سینکڑوں نہیں بلکہ ہر مگر اس کا شکار ہو کر پھر صفحہ ہستی سے مٹ گئے لیکن بزرگ شہر ملتان ہزاروں سال پہلے بھی زندہ تھا عطا اور آج بھی زندہ ہے ملتان کو کو صفحہ ہستی سے مٹانے کی کوشش کرنے والے حملہ آور خود نیست و نابود ہو گئے لیکن ملتان آج بھی اپنے پورے تقدس کے ساتھ زندہ ہیں

 کشتیوں کے ذریعے صرف سکھر اور بھکر ہی نہیں بلکہ عراق ایران اور دکن تک تجارت ہوتی اسی طرح کو تجارتی اور مذہبی مرکز کی حیثیت حاصل ہوئی ہندوستان ہی نہیں پوری دنیا میں اس خطے سے اسلام کو پھیلانے کے لیے پیغام پہنچا۔

قیام پاکستان کے بعد ملتان نے بہت ترقی کی پرانا شہر تو اپنی تنگ گلیوں اور بازاروں سمیت چھ دروازوں میں گرا ہوا ہے یعنی دلی گیٹ، لوہاری، حرم گیٹ، پاک گیٹ، بوہڑ گیٹ اور دولت گیٹ شامل ہیں اندرون شہر کشادگی کی گنجائش نہ تھی سوائے اس کے کہ بہت سے عمارتوں کو منہدم کر کے نئی عمارتیں استوار کی گئی البتہ بیرونی اور نواحی علاقوں میں ملتان نے وسعت اختیار کرلی ہے

کنٹونمنٹ کا علاقہ بہت خوبصورت اور جدید ہوگیا ہے نئی بستی گلگشت کی جدید طرز تعمیر اور کشادہ بازار قابل ذکر ہیں نہیں جی اور بھارت بھی ملتان کا خاص شمار ہوتے ہیں ملتان کے تحفے بہت مشہور ہیں جن میں گرما ہاتھی دانت کی چوڑیاں سونے کے زیورات آرائشی سامان اور ملتانی سوہن حلوہ بہت شامل ہیں اب تو ملتانی سوہن حلوہ کو بین الاقوامی شہرت حاصل ہوگئی ہے ایک کبھی ملتان کے نام سے مشہور ہیں جسے ملتان راگ کہا جاتا ہے ہے۔

ملتان کو پھلوں کے بادشاہ آم کی وجہ سے ایک بڑی شہرت حاصل ہے ملتان کے آموں کو یورپی منڈیوں تک رسائی حاصل ہے اور یہ موسم گرما کی ایک خاص سوغات ہے وہاں لوگ اسے ایک دوسرے کو تحفے کے طور پر پیش کرتے ہیں ملتان میں آموں کی بڑی پیداوار ہوتی ہے ملتانی کام امام کے اس کے ذائقہ اور خوبصورتی کی وجہ سے اس کی پاکستان اور بیشتر ممالک میں اس کی مانگ بہت زیادہ ہے ملتان کی زمین بہت زرخیز ہے۔ یہاں کی فصلیں کاشت کی جاتی ہے جن میں گندم کپاس چنا مکئی دال اور چاول وغیرہ شامل ہیں کسان ملک کے لیے ایک خاص اہمیت رکھتے ہیں ۔

حکومت کو چاہے کہ ملتان کو دوسرے اضلاع اللہ اور علاقوں میں کالجز اور یونیورسٹیز کا قیام عمل میں لائے تاکہ یہ تعلیم کے میدان میں مزید ترقی کر سکے


Multan ki tareekh

Multan ko avlyaye karaam ki sarzamen kaha jata hai hai is bana par aik hafta Pakistan mein aik khaas maqam rakhta hai un صوفیاء mein hazrat Shah Shams hazrat aur Shah rukan aalam numaya hain hain un ki sarzamen ne ki sufi shouraa peda kiye jinhon ne sufiyana shairi ko taqwiyat di un mein Shakir shuja abadi barri ahmiyat ke haamil hai

Multan ki tareekh itni hi qadeem hai jitni insaan ki khud apni tareekh Sheikh Multan ki qadamat par ghhor karen to is mein Pakistan aur hindostan to kya poora jahan sama sakta hai موہنجودارو aur har baat par jaisay senkron nahi balkay har magar is ka shikaar ho kar phir safha hasti se mit gaye lekin buzurag shehar Multan hazaron saal pehlay bhi zindah tha ataa aur aaj bhi zindah hai Multan ko ko safha hasti se mitanay ki koshish karne walay hamla aawar khud naist o nabood ho gaye lekin Multan aaj bhi –apne poooray taqaddus ke sath zindah hain

dareaye Ravi Multan ke qadeem qilay ke pehlu mein behta tha aur usay bandargaah ki hesiyat bhi haasil thi kashtiyon ke zariye sirf Sukkur aur bhkr hi nahi balkay Iraq Iran aur dakkan tak tijarat hoti isi terhan ko tijarti aur mazhabi markaz ki hesiyat haasil hui hindostan hi nahi poori duniya mein is khittay se islam ko phelanay ke liye pegham pouncha .

qiyam Pakistan ke baad Multan ne bohat taraqqi ki purana shehar to apni tang galiyo aur baazaaron samait chay darwazon mein gira sun-hwa hai yani dili gate, lohari, haram gate, pak gate, bohrh gate aur doulat gate shaamil hain androon shehar kushadgi ki gunjaish nah thi siwaye is ke ke bohat se imaarton ko munhadim kar ke nai emiratein ustuwar ki gayi Albata bairooni aur nawahi ilaqon mein Multan ne wusat ikhtiyar karli hai

kntonmnt ka ilaqa bohat khobsorat aur jadeed hogaya hai nai bastii glgsht ki jadeed tarz taamer aur kushadah bazaar qabil zikar hain nahi jee aur Bharat bhi Multan ka khaas shumaar hotay hain Multan ke tohfay bohat mashhoor hain jin mein garma hathi daant ki choorian sonay ke zewraat araishi samaan aur mltani sohan halwa bohat shaamil hain ab to mltani sohan halwa ko bain al aqwami shohrat haasil hogayi hai aik kabhi Multan ke naam se mashhoor hain jisay Multan raag kaha jata hai hai .

Multan ko phalon ke badshah aam ki wajah se aik barri shohrat haasil hai Multan ke aamon ko Europi mandiyon tak rasai haasil hai aur yeh mausam garma ki aik khaas soghaat hai wahan log usay aik dosray ko tohfay ke tor par paish karte hain Multan mein aamon ki barri pedawar hoti hai mltani kaam imam ke is ke zayega aur khoubsurti ki wajah se is ki Pakistan aur beshtar mumalik mein is ki maang bohat ziyada hai Multan ki zameen bohat zarkhaiz hai. yahan ki faslein kaasht ki jati hai jin mein gandum kapaas chuna makayi daal aur chawal waghera shaamil hain kisaan malik ke liye aik khaas ahmiyat rakhtay hain .

hukoomat ko chahay ke Multan ko dosray azlaa Allah aur ilaqon mein colleges aur universities ka qiyam amal mein laaye taakay yeh taleem ke maidan mein mazeed taraqqi kar sakay

Comments

Popular posts from this blog

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023 Iss Post ma ham apky Urdu kay 300 behtreen or nayaab Quotes share karen gay. Ap tamam se guzarish ha ki is post ko apny friends or family kay sath zaroor share karen. Or hamein shukurya ada karny ka moqa den. shukurya...  

Salam Ba Hazoor Imam Hussain

 Salam Ba Hazoor Imam Hussain مہماں بنا کے گھر سے بلایا حسین کو  پھر کربلا کے بن میں بسایا حسین کو یہ قافلہ تھا کوفے کی جانب رواں دواں  کر کربلا میں گھیر کے لایا حسین کو وہ دلبر بتول تھا اور جان مصطفى  کیا جرم تھا یہی کہ بتایا حسین کو عباس اور قاسم واکبر ہوئے شہید  اصغر نے تیر کھا کے رلایا حسین کو رقم سب چل بسے ظہیر و بریر و حبیب تک  کوئی نہیں رہا تھا سہارا حسین کو تنہا نکل رہا ہے حرم سے علی کا لال  گھیرے ہوئے ہے فوج صف آراء حسین کو وہ جنگ کی، کہ بدر کا منظر دکھا دیا  ہر اک نے الامان پکارا حسین کو اتنے میں ماہ دین گہن میں چلا گی  تیغ و تبر سے تیر سے مارا حسین کو نہر فرات پاس تھی پانی نہیں  پیاسا کیا شہید دل آرا حسین کو اے کربلا حسین نے تجھ کو لہو دیا  تو نے نہ ایک قطرہ پلایا حسین کو  زہرا کے کے گلبدن کا بدن بے کفن کو  تپتی زمین پر نہ چھپایا حسین کا جس دل میں عشق سبط نبی کا سما گیا  اس دل نے پھر کبھی نہ بھلایا حسین ن کو ناشاد ناتواں کو زیارت نصیب  یہ التماس بھیجی ہے مولا حسین کو mehmaan bana ke ghar se bulaya Hussain ko phir karbalaa ke ban mein basaayaa Hussain ko yeh qaafla tha kofe k

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar