Skip to main content

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar

dosti

dosti 


دوستی

سچا دوست ایسے ہی ہوتا ہے جیسے ایک جسم میں دو جانیں فارسی میں اسے ایک جاں دو قالب کہتے ہیں دو جانوں کا مطلب ہے کہ دو الگ الگ روحیں ہوں لیکن ان کی سوچ زندگی گزارنے کا طریقہ دوسرے انسانوں کے ساتھ برتاؤ کا اندازہ ایک جیسا ہو دوست وہ ہوتا ہے جو ان لوگوں کو پسند کرے جن کو دوسرا دوست پسند کرتا ہے اور ان کو ناپسند کرے جن کو دوسرا دوست بننا پسند کرے دوست تلاش کرنا ایک مشکل مرحلہ ہے کہتے ہیں کہ دوست تلاش کرتے وقت ایک آنکھ بند کر لی جائے تب اس کی خامیاں اور کوتاہیاں نظر نہ آئے لیکن جب دوست بنا لیا تو دونوں کے بند کر لی جائے تا کی اس کی کوئی غلطی نظر نہ آئے میرے خیال میں میں دوستی آپ لوگوں کو میٹھے خربوزے کی تلاش میں سو خربوزے چیک کرنا ہوں گے

مصیبت کے وقت مصنوعی مجبوریاں پیش کرنے والے لوگ لوگ مصلحت پسند اور مطلب پرست ہو سکتے ہیں لیکن دوست کبھی بھی نہیں ہو سکتے خوشحالی دوست بنانے کی وجہ سے آتی ہے اور مصیبت دوستی کو آزماتی ہے اگر کوئی مصیبت میں میں ساتھ چھوڑ جائے آئے تو دوست نہیں کہلا سکتا۔ دوستی نام ہی اعتماد کا ہے خلوص محبت محبت اور وفا کا ہے۔دوستی میں احترام ضروری ہے ہر نئی چیز خوبصورت لگتی ہے لیکن دوستی جتنی پرانی ہوگی اتنی ہی عمدہ اور مضبوط ہوگی کہتے ہیں کہ جب دوست بناؤ تو ساتھی ایک کم ہوتی جائے جس میں دوست کی غلطیاں اور خامیاں دفنا دی جائے کیونکہ یہ ضروری ہے کہ دوست کا کسی حال میں بھی دل نہ توڑا جائے چاہے آپ حق پر ہی کیوں نہ ہو دوست کو تنہائی میں سمجھاؤں لیکن اس کی تعریف لوگوں میں کی جائے

دوستی نام ہیں اسی چیز کا ہے کہ جو تیرا ہے وہ میرا ہے اور جو میرا ہے وہ تیرا ہے ہے جس طرح انسان اپنی غلطیوں کا جائزہ کو بھی تنہائی میں اس کی غلطیوں سے آگاہ کیا جائے دراصل دوستی پودوں اور درختوں کی طرح ہوتی ہیں جو آہستہ آہستہ پروان چڑھتی ہے ہے جس کو خود پڑھ سکتا ہے لیکن جب گرا ہو جاتا ہے تو اس قدر مضبوط ہوجاتا ہے کہ اس کو گرانے کے لئے کسی میں دم نہیں ہوتا ۔

اگر دوست کی طرف سے سے کوئی دکھ پہنچے مجھے تو اس کا زخم بھی بہت گہرا ہوتا ہے اس زخم کو برداشت کرنا مشکل تو ہوتا ہے اور زخم کھانے کے بعد خوشگوار زندگی گزارنا مشکل ترین ہے اس کی وجہ یہ ہے کہ والدین اور رشتہ داروں کو منتخب کرنے میں آزاد نہیں ہے لہذا قریبی رشتہ داروں کی طرف سے ملنے والی کو دنیا داری سمجھ کر قبول کر لیتے ہیں لیکن ہم زمانے کو چھوڑ کر کر کسی ایک کو دوست بنا لیتے ہیں اس کی طرف سے تکلیف پہنچے تو اس طرح محسوس ہوتا ہے جیسے سارے زمانے نے تکلیف پہنچائی ہو لہذا اس طرح کی تکلیف دینے والوں اور منافق لوگوں کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ اللہ سے محفوظ رکھ منافقوں سے  اور شیطان سے میں اپنے آپ کو محفوظ کر لوں دراصل دوستی کے لباس میں موجود منافقوں نے دوستی کو بہت نقصان پہنچایا ہے ہے۔

ایک دن میں سو دوست بنا لینا کمال کی بات نہیں ہے اصل کمال تو تب ہے کہ ایک دوست کے ساتھ سو سال دوستی نبھائی جائے


dosti

sacha dost aisay hi hota hai jaisay aik jism mein do jaanen farsi mein usay aik jaan do Qalib kehte hain do jaanun ka matlab hai ke do allag allag roohein hon lekin un ki soch zindagi guzaarne ka tareeqa dosray insanon ke sath bartao ka andaza aik jaisa ho dost woh hota hai jo un logon ko pasand kere jin ko dosra dost pasand karta hai aur un ko napasand kere jin ko dosra dost ban-na pasand kere dost talaash karna aik mushkil marhala hai kehte hain ke dost talaash karte waqt aik aankh band kar li jaye tab is ki khamiyan aur kotahyan nazar nah aaye lekin jab dost bana liya to dono ke band kar li jaye taa ki is ki koi ghalti nazar nah aaye mere khayaal mein mein dosti aap logon ko meethay khrboze ki talaash mein so khrboze check karna hon ge

museebat ke waqt masnoi majboriyan paish karne walay log log Maslehat pasand aur matlab parast ho satke hain lekin dost kabhi bhi nahi ho satke khushhali dost bananay ki wajah se aati hai aur museebat dosti ko aazmati hai agar koi museebat mein mein sath chore jaye aaye to dost nahi kehla sakta. dosti naam hi aetmaad ka hai khuloos mohabbat mohabbat aur wafa ka hai. dosti mein ehtram zaroori hai har nai cheez khobsorat lagti hai lekin dosti jitni purani hogi itni hi umdah aur mazboot hogi kehte hain ke jab dost banaao to saathi aik kam hoti jaye jis mein dost ki ghalatiyan aur khamiyan dafna di jaye kyunkay yeh zaroori hai ke dost ka kisi haal mein bhi dil nah tora jaye chahay aap haq par hi kyun nah ho dost ko tanhai mein samjhaao lekin is ki tareef logon mein ki jaye

dosti naam hain isi cheez ka hai ke jo tera hai woh mera hai aur jo mera hai woh tera hai hai jis terhan insaan apni ghaltion ka jaiza ko bhi tanhai mein is ki ghaltion se aagah kiya jaye darasal dosti poudoun aur darakhton ki terhan hoti hain jo aahista aahista parwan chadhti hai hai jis ko khud parh sakta hai lekin jab gira ho jata hai to is qader mazboot hojata hai ke is ko giranay ke liye kisi mein dam nahi hota .

agar dost ki taraf se se koi dukh puhanche mujhe to is ka zakham bhi bohat gehra hota hai is zakham ko bardasht karna mushkil to hota hai aur zakham khanay ke baad Khushgawar zindagi guzaarna mushkil tareen hai is ki wajah yeh hai ke walidain aur rishta daaron ko muntakhib karne mein azad nahi hai lehaza qareebi rishta daaron ki taraf se milnay wali ko duniya daari samajh kar qubool kar letay hain lekin hum zamane ko chore kar kar kisi aik ko dost bana letay hain is ki taraf se takleef puhanche to is terhan mehsoos hota hai jaisay saaray zamane ne takleef pohanchai ho lehaza is terhan ki takleef dainay walon aur munafiq logon ke baray mein kaha jata hai ke Allah se mehfooz rakh munafiqon se aur shetan se mein –apne aap ko mehfooz kar lon darasal dosti ke libaas mein mojood munafiqon ne dosti ko bohat nuqsaan pohanchaya hai hai .

aik din mein so dost bana lena kamaal ki baat nahi hai asal kamaal to tab hai ke aik dost ke sath so saal dosti nibhai jaye


Comments

Popular posts from this blog

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023 Iss Post ma ham apky Urdu kay 300 behtreen or nayaab Quotes share karen gay. Ap tamam se guzarish ha ki is post ko apny friends or family kay sath zaroor share karen. Or hamein shukurya ada karny ka moqa den. shukurya...  

Salam Ba Hazoor Imam Hussain

 Salam Ba Hazoor Imam Hussain مہماں بنا کے گھر سے بلایا حسین کو  پھر کربلا کے بن میں بسایا حسین کو یہ قافلہ تھا کوفے کی جانب رواں دواں  کر کربلا میں گھیر کے لایا حسین کو وہ دلبر بتول تھا اور جان مصطفى  کیا جرم تھا یہی کہ بتایا حسین کو عباس اور قاسم واکبر ہوئے شہید  اصغر نے تیر کھا کے رلایا حسین کو رقم سب چل بسے ظہیر و بریر و حبیب تک  کوئی نہیں رہا تھا سہارا حسین کو تنہا نکل رہا ہے حرم سے علی کا لال  گھیرے ہوئے ہے فوج صف آراء حسین کو وہ جنگ کی، کہ بدر کا منظر دکھا دیا  ہر اک نے الامان پکارا حسین کو اتنے میں ماہ دین گہن میں چلا گی  تیغ و تبر سے تیر سے مارا حسین کو نہر فرات پاس تھی پانی نہیں  پیاسا کیا شہید دل آرا حسین کو اے کربلا حسین نے تجھ کو لہو دیا  تو نے نہ ایک قطرہ پلایا حسین کو  زہرا کے کے گلبدن کا بدن بے کفن کو  تپتی زمین پر نہ چھپایا حسین کا جس دل میں عشق سبط نبی کا سما گیا  اس دل نے پھر کبھی نہ بھلایا حسین ن کو ناشاد ناتواں کو زیارت نصیب  یہ التماس بھیجی ہے مولا حسین کو mehmaan bana ke ghar se bulaya Hussain ko phir karbalaa ke ban mein basaayaa Hussain ko yeh qaafla tha kofe k

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar