Skip to main content

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar

Bachat Karna Seekhein

 Bachat Karna Seekhein

is kahani ma ham apko bata yen gay ki ham kis trah Bachat ki adaat apnaa sakty hain or kis trah ham payi payi payi jor kar aik bari raqam bna sakty hain.....
kahani kay dosry hissay ma ham apko bata yen gay ki ha ham kis Trah Allah Talaa ki neemaat ka ziyaa honay se bacha sakty hain. To Khani ko parho or apni raye ka izhaar comment section ma zaroor karen 
بچت کرنا سیکھیں
فوزیہ اور اسماء ماں دونوں بہنیں ایک ہی سکول میں پڑھتی ہیں ہیں سکول جانے سے پہلے وہ اپنے ابا جان سے جیب خرچ کے لیے کچھ رقم لیتی ہیں ہیں یہ اپنے حصے کی کی رقم اسی دن خرچ کر دیتی ہے ہے جب اسما روزانہ اپنے جیب خرچ میں سے کچھ نہ کچھ بچا لیتی ہے ہوئے رقم سے اچھی اچھی کتابیں خریدی ہے اور انہیں سے اور بھی کوئی نہ کوئی چیز منگوانی لیتی ہے ۔ مثلاً گھڑی، اچھا قلم خوبصورت ہار وغیرہ سب گھر والے آسماں کی اس عادت کو بہت پسند کرتے ہیں ۔
ایک دن اب جان اسما کیلئے گھڑی لآئے تو فوزیہ ناراض ہوگئی فوزیہ نے اپنی امی جان سے شکایت کی کہ اباجان آسماں کے لیے تو اتنی زیادہ چیزیں لاتے ہیں لیکن مجھے صرف جیب خرچ ہی دیتے ہیں۔
امی جان نے بتایا پیاری بیٹی آپ کی اب جان دونوں کو برابر جیب خرچ سے دیتے ہیں لیکن سما کچھ رقم بچا لیتی ہے اور آپ کے ابا جان اسی بچائیں ہوئی رقم میں سے سے اسے کوئی جلا دیتے ہیں آپ بھی کریں اور اپنی پسند کی چیزیں منگوا لیا کریں۔
فوزیہ بولی امی جان جیب خرچ کا مطلب تو یہ ہوتا ہے کہ اس دن کے لیے خرچ کرنے کی رقم ہے۔ اب اس میں سے کون سے کیسے بچائے۔
امی جان نے جواب دیا نہیں پیاری بیٹی یہ ضروری نہیں جو ملے اسے فورا کھانے پینے پر خرچ کر ڈالو ضرورت کے مطابق کچھ خرچ کر لو کچھ بچا لو جیسے اسماء کرتی ہے ہے۔ فوزیا نے امی جان کی بات سنی اور کہنے لگی ہوں امی جان میں سمجھ گئی اب تو آئندہ کے لئے میں بھی بچت کروں گی اور اچھی کتابیں اور پیاری پیاری چیزیں منگوایا کروں گی۔فوزیہ نے غسل خانے میں ہاتھ دھوئے اس نے نل کو کھلا چھوڑا اور دانت صاف کرنے لگ گئی اتنے میں امی جان آ گئی وہ بولی بیٹا نل بند کرو پانی ضائع نہیں کرتے یہ اللہ تعالی کی نعمت ہے ۔ فوزیہ نے نال بند کیا اور پوچھا امی جان بلا پانی ضائع ہونے سے کیا ہوگا ان میں بتایا بیٹا ہم مختلف کاموں کے لئے پانی کا استعمال کرتے ہیں اگر پانی نہ ہو تو ہم زندہ نہ رہ سکے ہمارے پاس پانی کی ایک خاص مقدار موجود ہے ہمیں اس کا استعمال احتیاط سے کرنا چاہیے تاکہ میں پانی کی کمی کا سامنا نہ کرنا پڑے ۔ فوزیہ نے کہا انشاء اللہ میاں جسے اللہ تعالی کی اس نعمت کا استعمال احتیاط سے کرونگی گی۔

bachat karna sekhen
Fozia aur Asma maa dono behnain aik hi shool mein padti hain hain shool jane se pehlay woh –apne abba jaan se jaib kharch ke liye kuch raqam layte hain hain yeh –apne hissay ki ki raqam isi din kharch kar deti hai hai jab asmaa rozana –apne jaib kharch mein se kuch nah kuch bacha layte hai hue raqam se achi achi kitaaben kharidi hai aur inhen se aur bhi koi nah koi cheez mngwani layte hai. maslan ghari, acha qalam khobsorat haar waghera sab ghar walay aasmaa ki is aadat ko bohat pasand karte hain .
aik din ab jaan asmaa ke liye ghari لآئے to Fozia naraaz hogayi Fozia ne apni ammi jaan se shikayat ki ke اباجان aasmaa ke liye to itni ziyada cheeze laatay hain lekin mujhe sirf jaib kharch hi dete hain .
ammi jaan ne bataya pyari beti aap ki ab jaan dono ko barabar jaib kharch se dete hain lekin sama kuch raqam bacha layte hai aur aap ke abba jaan isi bachayen hui raqam mein se se usay koi jala dete hain aap bhi karen aur apni pasand ki cheeze mangwa liya karen .
Fozia boli ammi jaan jaib kharch ka matlab to yeh hota hai ke is din ke liye kharch karne ki raqam hai. ab is mein se kon se kaisay bachaaye .
ammi jaan ne jawab diya nahi pyari beti yeh zaroori nahi jo miley usay foran khanay peenay par kharch kar daalo zaroorat ke mutabiq kuch kharch kar lo kuch bacha lo jaisay Asma karti hai hai. فوزیا ne ammi jaan ki baat suni aur kehnay lagi hon ammi jaan mein samajh gayi ab to aindah ke liye mein bhi bachat karoon gi aur achi kitaaben aur pyari pyari cheeze mangwaya karoon gi. Fozia ne ghusal khanaay mein haath dhuain is ne null ko khula chorra aur daant saaf karne lag gayi itnay mein ammi jaan aa gayi woh boli beta null band karo pani zaya nahi karte yeh Allah taala ki Nemat hai. Fozia ne naal band kya aur poocha ammi jaan bulaa pani zaya honay se kya hoga un mein bataya beta hum mukhtalif kamon ke liye pani ka istemaal karte hain agar pani nah ho to hum zindah nah reh sakay hamaray paas pani ki aik khaas miqdaar mojood hai hamein is ka istemaal ahthyat se karna chahiye taakay mein pani ki kami ka saamna nah karna parre. Fozia ne kaha Insha Allah miyan jisay Allah taala ki is Nemat ka istemaal ahthyat se karongi gi.

Comments

Popular posts from this blog

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023

300+ Best Quotes in Urdu with Images 2023 Iss Post ma ham apky Urdu kay 300 behtreen or nayaab Quotes share karen gay. Ap tamam se guzarish ha ki is post ko apny friends or family kay sath zaroor share karen. Or hamein shukurya ada karny ka moqa den. shukurya...  

Salam Ba Hazoor Imam Hussain

 Salam Ba Hazoor Imam Hussain مہماں بنا کے گھر سے بلایا حسین کو  پھر کربلا کے بن میں بسایا حسین کو یہ قافلہ تھا کوفے کی جانب رواں دواں  کر کربلا میں گھیر کے لایا حسین کو وہ دلبر بتول تھا اور جان مصطفى  کیا جرم تھا یہی کہ بتایا حسین کو عباس اور قاسم واکبر ہوئے شہید  اصغر نے تیر کھا کے رلایا حسین کو رقم سب چل بسے ظہیر و بریر و حبیب تک  کوئی نہیں رہا تھا سہارا حسین کو تنہا نکل رہا ہے حرم سے علی کا لال  گھیرے ہوئے ہے فوج صف آراء حسین کو وہ جنگ کی، کہ بدر کا منظر دکھا دیا  ہر اک نے الامان پکارا حسین کو اتنے میں ماہ دین گہن میں چلا گی  تیغ و تبر سے تیر سے مارا حسین کو نہر فرات پاس تھی پانی نہیں  پیاسا کیا شہید دل آرا حسین کو اے کربلا حسین نے تجھ کو لہو دیا  تو نے نہ ایک قطرہ پلایا حسین کو  زہرا کے کے گلبدن کا بدن بے کفن کو  تپتی زمین پر نہ چھپایا حسین کا جس دل میں عشق سبط نبی کا سما گیا  اس دل نے پھر کبھی نہ بھلایا حسین ن کو ناشاد ناتواں کو زیارت نصیب  یہ التماس بھیجی ہے مولا حسین کو mehmaan bana ke ghar se bulaya Hussain ko phir karbalaa ke ban mein basaayaa Hussain ko yeh qaafla tha kofe k

Salam Aqeedat

 Salaam Aqeedat مرے کلام پہ حمد و ثناء کا سایہ ہے  مرے کریم کے لطف و عطاء کا سایہ ہے میں حمد و منقبت و نعت لکھ رہا ہوں،  میرے تخیلات شاه ھدی کا سایہ ہے لکھا ہے حسن جہاں، اُس کو پڑھ چکا ہوں  حسن کیں پہ خامس آل عبا کا سایہ ہے خدا نے ہم کو نوازا حواس خمسہ سے  یہ ہم پہ پنجتن با صفا کا سایہ ہے کوئی مریض ہو لے جا رضا کے روضے پر  وہیں طبیب ہے، دار الشفاء کا سایہ ہے سفر ہو یا ہو حضر مجھ کو کوئی خوف نہیں  کہ مجھ پہ شاہ نجف مرتضی کا سایہ ہے علی امام مرا، اور میں غلام علی  علی کی شان پر تو لافتی کا سایہ ہے علی کا نام تو حرز بدن ہے اپنے لیے  علی کے اسم پہ رب علی کا سایہ ہے ن لطف احمد مرسل بفضل آل رسول  میں خوش نصیب ہوں مجھ پر ہما کا سایہ ہے وہی ہے نفس پیمبر وہی ہے زوج بتول  علی کی ذات پر ہی ہل اتی کا سایہ ہے ریاض خلد کے سردار شبر و شبیر  حدیث پاک ہے، خیر الوریٰ کا سایہ ہے سفیر کرب و بلا، زینب حزیں پہ سلام  وہ جس کے عزم پہ خیر النسا " کا سایہ ہے تری دعا کی اجابت میں دیر کیا ہو گی  علی کا نام لے! حاجت روا کا سایہ ہے نجات پائے گا ہر دکھ سے تو نہ رہ ناشاد  کہ تجھ پہ رحمت ارض و سماء کا سایہ ہے mar